پاکستانی ڈرائیور نے گھریلو ملازمہ کو زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا

جس وقت ڈرائیور نے ملازمہ کی عزت تار تار کی، اُس وقت مالک اور اُس کی فیملی گھر میں موجود نہ تھے

Muhammad Irfan محمد عرفان بدھ جون 11:42

پاکستانی ڈرائیور نے گھریلو ملازمہ کو زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا
دُبئی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین،12جُون 2019ء) دُبئی کے علاقے الغصیص میں واقع ایک وِلا میں پاکستانی ڈرائیور نے گھریلو ملازمہ کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا۔ جس وقت یہ واقعہ پیش آیا اُس وقت 26 سالہ فلپائنی ملازمہ مالک کے گھر میں اکیلی تھی۔ جس کا فائدہ اُٹھا کر 32 سالہ پاکستانی ڈرائیور نے یہ مذموم حرکت کی۔ استغاثہ کی جانب سے عدالت کو بتایا گیا کہ اُس کا مالک اپنی فیملی کے ساتھ تعطیلات منانے گیا تھا۔

ایک روز وہ گھر میں اکیلی تھی جب ڈرائیور نے اُس کے پاس آ کر کہا کہ وہ اُس کے پیچھے پیچھے باتھ رُوم میں آ جائے ۔ جب ملازمہ نے اُس کی بات نہ مانی تو اُس نے زبردستی اُسے چومنے کی کوشش کی مگر ملازمہ نے اُسے پیچھے کو دھکیل دیا۔ ٹھیک دو دِن بعد، ملازمہ جب گھر کے لانڈرم رُوم میں گئی تو ملزم بھی وہاں آیا اور اُسے پیچھے سے اپنے بازوﺅں میں جکڑ لیا۔

(جاری ہے)

ملازمہ نے اپنا آپ چھُڑوانے کی بہت کوشش کی مگر ڈرائیور کے آگے اُس کی ایک نہ چلی۔ ملزم اُسے گھسیٹ کر ایک قریبی کمرے میں لے گیا۔ جہاں اُس نے ملازمہ کے زبردستی کپڑے اُتار کر اُسے عزت سے محروم کر دیا۔ ملازمہ کے مطابق وہ روتی چِلاتی رہی مگر پاکستانی ڈرائیور کو اُس پر ذرا بھی رحم نہ آیا۔ ملازمہ نے بعد میں پولیس کو اس واقعے کی رپورٹ کر دی جس نے ملزم کو گرفتار کر لیا جس نے دورانِ تفتیش اپنی گھٹیا حرکت کا اعتراف کر لیا۔ اس مقدمے کی اگلی سماعت 25 جُون کو ہو گی جس میں ملزم کو سزا سُنائے جانے کا قوی امکان ہے۔