Sat Wari

ست واری

پر نام سنگھ نے نئی کار خریدی۔ پہلے روز ہی لانگ ڈرائیو کے لئے سڑک پر آگیا۔ گھر سے تھوڑی دور ہی گیا تھا کہ کار ایک دودھ والے کی سائیکل سے ٹکرا گئی ، دودھ بیچنے والا موٹا پہلوان تھا۔ وہ نیچے گرا ، ہلکی پھلکی چوٹیں آئیں ، دودھ سڑک پر بہہ گیا، سائیکل کا ”چمٹا “ ٹیڑھا ہو گیا۔ جتنی دیر میں پر نام سنگھ نے گاڑی روکی، پہلوان اٹھ کر اس تک پہنچ گیا۔ پر نام سنگھ کو گریبان سے کھینچ کر کار سے باہر نکالا اور خوب پھینٹی لگائی، اچھی طرح دھلائی کرنے کے بعد وہ پرنام سنگھ سے بولا، ”ایہہ تے اونہاں سٹاں دا حساب سی، جیہڑیاں مینوں لگیاں! میر ادودھ ڈلیا، سائیکل دا چمٹا ونگاہو یا… اودے بدلے میں تیری گڈی بھناں گا۔“ یہ کہہ کر پہلوان نے ڈنڈا اٹھایا اور کار کی بتی توڑی دی۔ پر نام سنگھ منت سماجت کے لئے آگے بڑھا تو پہلوان نے زمین پر ایک لکیر کھینچی، پرنام سنگھ کو اس کے دوسری طرف کھڑ اکیا اور کہنے لگا، ”مینوں آرام نال گڈی بھن لین دے… جے تُوں لکیر ٹپی تے میں تینوں بھن دیاں گا۔“ یہ کہہ کر پہلوان جی نے گاڑی کی ایسی تیسی پھیرنا شروع کر دی۔ جب گاڑی، کار سے بسکٹ بن گئی تو وہ واپس پلٹا، دیکھا تو پر نام سنگھ کھڑا ہنس رہا تھا۔ ”اوئے میں تیری گڈی بھن دتی، توں فیروی ہس رہیا ایں، کیوں ؟“ پر نام سنگھ کہنے لگا،” میں دس دینا پہلوان جی… مینوں مارو گے تے نئیں؟“ پہلوان بولا، نئیں ماراں گا، توں گل دس!“ پر نام سنگھ کہنے لگا،”پہلوان جی… تساں مینوں کہیا سی توں لائن نئیں ٹپنی، جدوں تسی میری کار بھن رہے سو، میں ست واری لائن ٹپی، تہانوں پتہ ای نئیں لگا۔

Your Thoughts and Comments