Hamare Quaid

ہمارے قائد

بانی پاکستان قائداعظم محمد علی جناح تاریخ کا ایک ایسا سنہری نام ہے جس کی کرنیں آج بھی لوگوں کے دل ودماغ منور کررہی ہیں۔

بدھ اگست

Hamare Quaid
شاہ بہرام انصاری
بانی پاکستان قائداعظم محمد علی جناح تاریخ کا ایک ایسا سنہری نام ہے جس کی کرنیں آج بھی لوگوں کے دل ودماغ منور کررہی ہیں۔مسلمانوں کے اندر آزادی اور حریت کا بے پناہ جوش وجذبہ پیدا کرنے کے لیے وہ اپنی تمام صلاحیتوں کو بروئے کار لائے اور محنت ولگن کا دامن پکڑ کر ایک روشن مثال قائم کی۔

بلاشبہ پاکستان معرض وجود آنے میں سب سے زیادہ جدوجہد قائداعظم نے کی اور اپنے مخلص ساتھیوں کی مدد سے اقبال کے خواب کو شرمندہ تعبیر کر دیا۔برصغیر کے بے بس ولا چار مسلمانوں کو ہاہائے قوم کی قابل تعریف کوشش سے جو سوچ اور آگاہی ملی،اس نے انہیں ہندوؤں اور انگریزوں کی غلامانہ زندگی کی زنجیروں اور ذہنی قید سے نجات دلاتے ہوئے ایک اسلامی مملکت کا حصول ممکن بنا دیا۔

(جاری ہے)

نظریہ پاکستان کے بعد انہوں نے مسلمانوں کو خواب غفلت سے جگایا اور پاکستان کا مطالبہ کرتے وقت یہ نہیں سوچا کہ وہ ان کا ساتھ دیں گے یا نہیں۔
بس ان کے دل میں مسلمانوں کے لئے ایک تڑپ موجود تھی جو بعد میں قیام پاکستان بن کر ایک لازوال حقیقت کی شکل اختیار کرگئی۔
قائداعظم کی سوچ اور خیالات مسلمانوں کی خواہشات کے عین عکاس تھے اگر ایسا نہ ہوتا تو دین اسلام کا قلعہ دنیا کے نقشے پر کبھی نہ ابھرتا ۔عرصہ دراز سے جو مسلم قوت دبکی ہوئی تھی ،ان کی ایک آواز اٹھانے کے بعد غفلت دلا پروائی کی نیند سے بیدار ہو کر شعور کے زینے پررواں ہو گئی۔

پاکستان قائم ہوتے وقت لاکھوں مسلمانوں نے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا۔یہ ہمارے قائد کی انتھک محنت کا ہی نتیجہ ہے کہ آج بھی ہر محب وطن پاکستانی اس سوہنی دھرتی کے لئے اپنی جان قربان کرنے کو ہمہ وقت تیار رہتاہے۔
کتنے تھے پیارے قائد ،میرے قائد ،تمہارے قائد دشمن بھی لر زاٹھے ،ایسے تھے ہمارے قائد قائداعظم نے تصور پاکستان کے ذریعے مسلم دنیا میں آزادی کا ایسا جنون اور ولولہ پیدا کیا کہ ایک دن پاکستان کا پرچم دنیا میں لہرادیا گیا ۔
ان کے اس اقدام نے مسلمانوں کو ظالموں سے لڑنے اور ان سے اپنے حقوق لینے پرا کسایا۔مسلمانوں پر حکومت کرنے والے انگریزی اور ہندو ہمارے قائد کے سپاہیوں کے بلند حوصلے کے آگے ریت کی دیوار ثابت ہوئے اور کچھ ہی عرصے بعد انہوں نے الگ وطن حاصل کر لیا۔

بانی پاکستان کی عظمت کا یہ منہ بولتا ثبوت ہے کہ آج دنیا کی ہر قوم ان کو عزت کی نگاہ سے دیکھتی ہے۔قائد نے دنیا بھر کے انسانوں اور خصوصاً مسلمانوں کو یہ پیغام دیا کہ مسلسل جہد ادرپختہ عزائم سے منزل حاصل کی جاسکتی ہے،خالص نیتوں اور مضبوط ارادوں کی بدولت دنیا کو فتح کیا جا سکتا ہے آج قائد اعظم کے بہادر ،نڈر اور بے باک سپاہی شاہین کی طرح اپنے ملک کی حفاظت پر محو پر واز ہیں اور اس کی خاطر دنیا کی ہر قوت سے جان لڑانے کو تیار ہیں ۔
ان کو قابل ستائش محنت کا ثمر ہم اس پیارے وطن کی صورت میں دیکھ رہے ہیں۔ان گنت اور بے شمار آزمائشوں اور مصیبتوں سے گزرنے کے باوجود قائد کا پاکستان پوری شان و شوکت سے قائم ہے خدا نے چاہا توقیامت تک قائم ودائم رہے گا۔

Your Thoughts and Comments