یوم شہادت حضرت علیؓ کے موقع پرسکیورٹی کیلئے جامعہ لائحہ عمل تیار، 4 ہزارسے زائد افسران اور اہلکار ڈیوٹی کے فرائض سر انجام دیں گے

ہفتہ مئی 19:23

لاہور۔25 مئی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 25 مئی2019ء) لاہور پولیس کی جانب سے یوم شہادت حضرت علی ؓ کے مرکزی جلوس اور دیگر منسلک پروگراموںپر سکیورٹی لائحہ عمل کو حتمی شکل دے دی گئی ۔یوم علیؓ کے عزداری جلوس کے موقع پر پولیس کے مجموعی طور پر 04ہزار سے زائد افسران اور اہلکار سکیورٹی ڈیوٹی کے فرائض سر انجام دیں گے۔ 09ایس پیز،30ڈی ایس پیز،81انسپکٹرز،400 اًپر سب آرڈینیٹس عزاداروں کو تحفظ فراہم کریں گے۔

85 ہیڈ کانسٹیبلز اور 3700 سے زائد کانسٹیبلز عزاداری جلوس کے داخلی و خارجی راستوں اور مرکزی جلوس کی سکیورٹی پر مامور ہونگے۔لاہور پولیس کی 170 سے زائد لیڈی کانسٹیبلز بھی خواتین شرکاء کی چیکنگ اور سکیورٹی ڈیوٹی کے فرائض سر انجام دیں گی۔سکیورٹی ڈیوٹی کے حوالے سے علاقے کو سیکٹر زاور سب سیکٹر زمیں تقسیم کیا گیا ہے ۔

(جاری ہے)

موبائل سروس مخصوص علاقوں میںمخصوص دورانیہ میں معطل رہے گی ۔

ڈی آئی جی آپریشنز لاہور اشفاق خان نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ لاہور پولیس کی اس وقت سب سے اہم اور حساس ذمہ داری یومِ شہادت علی ؓ کے مرکزی جلوس اوردیگر پروگراموں کوفو ل پروف سکیورٹی فراہم کرنا ہے ۔ مبارک حویلی سے شروع ہوکرکربلا گامے شاہ اختتام پذیرہونے والے اس مرکزی جلوس کے پُر امن انعقاد کیلئے ضلعی امن کمیٹی ، تاجر تنظیموں،علاقائی نمائندوں ، گھروں ،چوباروں کے رہائشی افراد کی بھرپور مشاورت حاصل کی گی ہے ۔

مرکزی جلوس کے روٹ پر تمام گلیوں، مارکیٹوں،کمرشل ،رہائشی پلازوں اور دکانوں کا سکیورٹی آڈٹ کیا جاچکا ہے اورمتعلقہ افراد سے ضمانتی مچلکے حاصل کئے گئے ہیں۔یوم علیؓ کے انتظامات کا تجربہ رکھنے والے ریٹائرڈ پولیس افسران سے بھی مشاورت کی گئی ہے ۔ تمام روٹ پر سیف سٹی اتھارٹی کی200 سے زائد کیمرے نصب کئے گئے ہیں۔ ضلعی انتظامیہ کی جانب سے جلوس کی نگرانی کیلئے بھی سی سی ٹی وی کیمروںاور مناسب لائٹنگ کے انتظامات مکمل کر لئے گئے ہیں۔

جلوس کے داخلی مقامات پر واک تھرو گیٹس ، میٹل ڈیٹیکٹرز اور رضا کاروں کی مدد سے مکمل تلاشی کے بعد ہی شرکاء کو داخلے کی اجازت ہو گی۔ مبارک حویلی سے کربلا گامے شاہ تک 05کلو میٹر روٹ میں آنے والی 197گلیوں کو خار دار تاروں اور بیئریئرز لگا کر مکمل طور پر بند کر دیا جائے گا۔ کسی بھی غیر متعلقہ شخص کو جلوس میں داخل ہونے کی اجازت ہرگز نہیں دی جائے گی۔

جلوس کی سکیورٹی کے لئے چھتوں پرسنائپرز بھی تعینات کئے جائیں گے۔ کیمونٹی پولیسنگ کے تحت پولیس لائنز قلعہ گجر سنگھ میں مقامی رضاکاروں کو ضروری تربیت بھی فراہم کی گئی ہے ۔انٹیلی جنس ایجنسی سمیت پولیس فورس کے سادہ کپڑوں میں جوان تعینات کئے جائیں گے۔نیشنل ایکشن پلان کے تناظراوریومِ علی ؓ کے پروگرامز کو محفوظ بنانے کیلئے سرچ آپریشن بھی جاری ہیں۔

گھروں، ہوٹلوں،گیسٹ ہاوسسز، بس اڈوںاور ریلوے ا سٹیشن پر بائیو میٹرک تصدیق کے علاوہ مختلف مقامات پر ہوٹل آئی ایپ کی مدد سے بھی شہریوں کا ڈیٹا چیک کیا جا رہا ہے ۔انہوں نے کہا کہ سکیورٹی انتظامات کی سپرویژن کا علیحدہ میکانزم بنایا گیا ہے۔سیف سٹی اتھارٹی اور ڈپٹی کمشنرآفس کے کنڑول روم سے مسلسل مانیٹرنگ کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ فزیکل بیرئیر سمیت الیکٹرانک بیئریئربھی نصب کئے جائیں گے۔

مختلف مقامات پر ڈیوٹی دینے والے پولیس اہلکاروں کو افطاری بھی ان کے ڈیوٹی کے مقام پر پہنچائی جائے گی۔علاقے کو آج(اتوار) رات سے مکمل طور پر سیل کر دیا جائے گا۔اندرون شہر کی19کے قریب ناکوں پر بھی چیکنگ کا عمل مسلسل جاری ہے۔عزداری کے شرکا کی گاڑیوں کے لئے پارکنگ کے علیحدہ انتظامات ہیں ۔ ہمیں قوی یقین ہے کہ یومِ علی ؓ کے جلوس کی سکیورٹی کے حوالے سے اللہ تعالیٰ ہمیں کامیابی دے گا۔

لاہور شہر میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments