لاہور میں خواجہ سرا کمیونٹی کیلئے اسکول کے بعد پہلا اولڈ ہوم بھی بن گیا

خواجہ سرائوں کی تنظیم ’’ بے گھر فائونڈیشن ‘‘ کی جانب سے رچنا ٹائون میں اولڈ ہوم بنایا گیا ،باقاعدہ افتتاح آئندہ چند روز میں کیا جائیگا اولڈ ہوم میں بیسہارا، بیمار اور ایڈز جیسے امراض میں مبتلا خواجہ سرائوں کو رہائش،کھانا اور علاج معالجے کی سہولتیں مفت مہیا کی جائیں گی‘عاشی بٹ

جمعرات اپریل 15:56

لاہور میں خواجہ سرا کمیونٹی کیلئے اسکول کے بعد پہلا اولڈ ہوم بھی بن ..
لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 26 اپریل2018ء) لاہور میں خواجہ سرا کمیونٹی کی تعلیم اور پیشہ ورانہ تربیت کے لیے ایک اسکول کے قیام کے بعد پاکستان میں خواجہ سرائوں کے لیے پہلا اولڈ ہوم بھی بن گیا۔۔لاہور کے قریب رچنا ٹائون میں بنایا گیا یہ اولڈ ہوم کسی اور نے نہیں بلکہ خواجہ سرائوں کی اپنی ہی ایک تنظیم ’’بے گھر فانڈیشن‘‘نے بنایا ہے، جس کا باقاعدہ افتتاح آئندہ چند روز میں کیا جائے گا۔

اس اولڈ ہوم میں بے سہارا، بیمار اور ایڈز جیسے امراض میں مبتلا خواجہ سرائوں کو رہائش،کھانا اور علاج معالجے کی سہولتیں مفت مہیا کی جائیں گی۔بے گھر فانڈیشن کی چیئرپرسن عاشی بٹ نے کہا کہ جب وہ بیمار اور لاچار خواجہ سرائوں کو سڑکوں پر خوار ہوتے اور سسکتے دیکھتی تھیں تو انہیں بہت دکھ ہوتاتھا۔

(جاری ہے)

خدا نے ان کی مدد کی اور آج ایڈز،، ہیپاٹائیٹس سی اور دیگر مہلک امراض میں مبتلا بے سہارا خواجہ سرائوں کو ایک محفوظ ٹھکانہ مل گیا ہے۔

فی الوقت سنگل اسٹوری پر مشتمل اس اولڈ ہوم میں 50خواجہ سرائوں کی رہائش کی گنجائش ہے جبکہ اس اولڈ ہوم کی تعمیر کے لیے تمام اخراجات خواجہ سراء تنظیم نے خود برداشت کیے ہیں۔اپنوں کی بے اعتنائی کا شکار خواجہ سرا کہتے ہیں کہ یہ اولڈ ہوم ان کے لیے کسی جنت سے کم نہیں۔انہیں ان کے اپنے پوچھیں یا نہ پوچھیں، انہیں فرق نہیں پڑتا کیونکہ اب ان کے لیے ایک اولڈ ہوم موجود ہے۔دوسری جانب بیمار،بے گھر اور بے سہارا خواجہ سراں کی حکومت سے اپیل ہے کہ دیگر شہروں میں بھی ایسے اولڈ ہوم بنائے جائیں۔