ملک بھر کے تمام دیہاتوں کو بجلی پہنچا دی گئی، بھارتی حکومتی دعویٰ

دیہات کو بجلی کی فراہمی مودی کی دی گئی ڈیڈلائن سے بارہ روز قبل مکمل،سوشل میڈیا صارفین کی حکومتی دعوئوں کی تردید

پیر اپریل 13:00

نئی دہلی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 30 اپریل2018ء) بھارتی حکومت نے دعویٰ کیا ہے کہ بھارت کے تمام دیہات کو بجلی کی فراہمی کا سلسلہ مکمل ہو گیا ہے۔ دوسری جانب کئی دیہات کے لوگوں نے سوشل میڈیا پر تحریر کیا ہے کہ یہ حکومتی دعویٰ درست نہیں ہے۔میڈیارپورٹس کے مطابق بھارتی حکومت نے ایک بیان میں کہاکہ سارے ملک کے دیہات کو بجلی کی فراہمی کا عمل وزیر اعظم نریندر مودی کی دی گئی مہلت سے بارہ روز قبل مکمل کر لیا گیا ہے۔

بھارتی وزیراعظم نے سابقہ الیکشن سے قبل اپنی انتخابی مہم کے دوران وعدہ کیا تھا کہ اٴْن کی حکومت ہر گاؤں کو بجلی فرہم کرے گی۔ سیاسی ماہرین کے مطابق 2019 کے عام انتخابات سے قبل مودی حکومت نے ایک بہت بڑے سنگ میل کو عبور کیا ہے اور نتجتاً مودی کو انتخابات میں دیہی عوام کی حمایت حاصل ہو سکتی ہے۔

(جاری ہے)

نریندر مودی نے اپنے ملک کے سبھی دیہات کو بجلی فراہم کرنے پر اِسے ملکی ترقی میں ایک تاریخی دن قرار دیا ہے۔

تمام دیہات کو بجلی کی فراہمی مکمل کرنے کے حوالے سے بھارتی وزیراعظم نے ا اعلان کیا کہ ملک کے انتہائی دور دراز شمال مشرق میں واقع ایک گاؤں آخری ہے، جسے بجلی فراہم کرنے کی بنیادی تیاری مکمل ہو گئی ہے۔۔مودی نے اپنے بیان میں کہا کہ بھارت کے بے بہا لوگوں کی زندگیوں میں ہمیشہ رہنے والی تبدیلی پیدا کر دی گئی ہے۔ اہم انتخابی وعدے کی تکمیل پر بھارتی حکومت کے وزراء نے سوشل میڈیا پر اپنے وزیراعظم کو مبارک باد دینے کا سلسلہ شروع کر رکھا ہے۔

نئی دہلی حکومت کے اعداد و شمار کے مطابق جب 2014 میں نریندر مودی نے منصبِ وزارتِ عظمیٰ سنبھالا تھا تو سارے ملک میں اٹھارہ ہزار 452 دیہات بغیر بجلی کے تھے۔ حکومت کے مطابق بھارت کے تقریباً چھ لاکھ دیہات کو اب بجلی فراہم کی جا چکی ہے۔دوسری جانب حکومت مخالف ماہرین کا کہنا تھاکہ بجلی فراہم کرنے والے گرڈ کے ساتھ دیہات کو منسلک کر دینے سے بجلی کی فراہمی کا عمل مکمل نہیں ہوتا۔ اسی طرح بعض لوگوں نے حکومتی دعوے کو غلط قرار دیتے ہوئے کہا کہ اٴْن کے گاؤں کو بجلی فراہم نہیں کی گئی ہے۔ ایسا ہی ایک ٹویٹ اتر پردیش کے دلیپ گپتا نے کیا ہے، اٴْن کے مطابق ابھی تک ہر ایک گاؤں کو بجلی فراہم نہیں کی جا سکی ہے اور ایسے دیہات میں اٴْن کا گاؤں بھی شامل ہے۔