وائٹ ہاؤس کا گوانتانامو بے کی تزئین و آرائش کیلئے اضافی فنڈز کا مطالبہ

گوانتاناموبے بے میں موجود 40 قیدیوں کے حوالے سے کوئی منصوبہ یا سیاسی عزم موجود نہیں ہے،وائٹ ہائوس

جمعہ مئی 15:56

واشنگٹن(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 25 مئی2018ء) وائٹ ہاؤس نے امریکا کی بدنام زمانہ گوانتاناموبے جیل میں موجود قیدیوں کی بڑھتی عمر اور وہاں موجود گارڈز کا مستقبل خطرات سے محفوظ کرنے کے لیے جیل کی تزئین و آرائش کیلئے اضافی فنڈز کا مطالبہ کردیا۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق افغانستان میں دہشت گردی کے خلاف شروع ہونے والی جنگ کے آغاز میں اور دیگر علاقوں سے گرفتار کیے گئے نوجوان افراد اب ادھیڑ عمر کو پہنچ چکے ہیں اور انہیں اس عقوبت خانے میں 15 سال سے زائد کا عرصہ گزرچکا ہے تاہم وائٹ ہاؤس کی جانب سے اس بات کا اعتراف سامنے آیا کہ گوانتاناموبے بے میں موجود 40 قیدیوں کے حوالے سے کوئی منصوبہ یا سیاسی عزم موجود نہیں ہے۔

اس حوالے سے وائٹ ہاؤس کی جانب سے قانون سازوں کو جاری کردہ پالیسی بیان میں کہا گیا کہ گوانتانامو بے میں موجود قیدیوں کے لیے موجودہ سہولت اور نظام ناکافی ہے اور اگر اسے حل نہیں کیا گیا تو مستقبل میں قیدیوں اور وہاں موجود ہمارے گارڈز کی زندگیوں کو خطرات لاحق ہوسکتے ہیں، لہٰذا اس جیل کی تزئین و آرائش کیلیے اضافی فنڈز فراہم کیے جائیں۔

(جاری ہے)

اس کے علاوہ یہ جیل بڑھتی عمر کے قیدیوں کی ضروریات کو بھی پورا نہیں کرتا، تاہم یہاں یہ بات واضح رہے کہ پینٹاگون کی جانب سے گوانتانامو بے کے قیدیوں سے متعلق کوئی معلومات نہیں جاری کی گئی لیکن وکی لیکس اور نیو یارک ٹائمز کی اطلاعات کے مطابق اس عقوبت خانے میں قیدی کی اوسط عمر ساڑھے 46 سال ہے جبکہ عمر کے لحاظ سے سب سے بڑا قیدی پاکستانی شہری سیف اللہ پراچہ ہے جو اگست میں 71 برس کا ہوجائے گا۔

تاہم اس رپورٹ پر پینٹاگون اور گوانتانامو بے کی جانب سے فوری طور پر کوئی تبصرہ نہیں کیا گیا۔خیال رہے کہ گوانتاناموبے میں بدنام زمانہ قیدی اور مبینہ طور پر 11 ستمبر 2001 کا ماسٹرمائنڈ 53 سالہ خالد شیخ محمد بھی موجود ہے، 2003 میں جب خالد شیخ محمد کو گرفتار کیا گیا تو اس وقت ان کی سیاہ مونچھیں تھی، تاہم وقت کے ساتھ ساتھ ان کی داڑھی آتی گئی جو گرے رنگ کی تھی جو اب اورنج رنگ کی ہوگئی ہے۔

اس بارے میں خالد شیخ محمد کے ساتھ شریک شازشیوں کے الزام میں قید گزارنے والے رمزی بینال شبح کے لیے مقرر کیے گئے اٹارنی جیمس کونیل کا کہنا تھا کہ انہوں نے اس بات کو دیکھا ہے کہ بڑتھی عمر کے قیدیوں کیلیے کچھ رہائش کی جگہ ہے۔انہوں نے کہا کہ کچھ اٹارنی نے اپنے دوروں کیدوران دیکھا کہ وہاں وہیل چیئر ریمپ ہیں اس کے علاوہ قیدیوں کے بیت الخلا سے اٹھنے میں مدد کے لیے ہیڈلز بھی دیکھے گئے، تاہم انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ بہت سے ایسی ضروری چیزیں ہیں جو انہیں فراہم نہیں کی جارہیں۔