راکٹ حملوں کا خطرہ، اسرائیلی فوج نے خطرے کے سائرن بجا دیے

یہودی آباد کاروں کی دوڑیں لگ گئیں

منگل مئی 15:42

مقبو ضہ بیت المقدس (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 29 مئی2018ء) اسرائیلی فوج نے ملک کی جنوبی سرحد پر غزہ سے متصل علاقوں میں فلسطینی مزاحمت کاروں کے ممکنہ راکٹ حملوں کے خطرے کے پیش نظر ‘انتباہی سائرن‘ بجا دئے جس کے بعد یہودی آباد کاروں کی دوڑیں لگ گئیں۔ تاہم یہ معلوم نہیں ہوسکا کہ آیا غزہ سے کوئی راکٹ فائر کیا گیا یا نہیں۔عبرانی میڈیا کے مطابق فوج کے زیرانتظام خطرے کے سائرن بج اٹھے۔

(جاری ہے)

سائرن بجتے ہی یہودیوں کی بڑی تعداد اپنے کام کاج چھوڑ کر بھاگ کھڑی ہوئی۔قبل ازیں اسرائیلی فوج نے غزہ کی پٹی پر بمباری کی جس کے نتیجے میں کم سے کم ایک شہری شہید اور ایک زخمی ہوگیا۔عینی شاہدین نے بتایا کہ اسرائیلی فوج نے توپ خانے سے شمالی غزہ میں بیت لاھیا کے مقام پر حماس کے مراکز پر گولے داغے جس کے نتیجے میں ایک شہری مارا گیا۔دوسری جانب اسرائیلی فوج کا کہنا ہے کہ ٹینکوں کی گولہ باری کی زد میں آ کر ایک فلسطینی مزاحمت کار مارا گیا جب کہ دو فلسطینی مزاحمت کاروں نے سرحدی باڑ عبور کرنے کی کوشش کی تاہم انہیں روک دیا گیا۔