Buri Sohbat - Article No. 1953

بُری صحبت

عامر بُری صحبت میں پڑ گیا اور اسے نشے کی لت پڑ گئی

پیر اپریل

Buri sohbat
زہرہ کنول اعوان،مظفر گڑھ
عامر ہمیشہ اپنی والدہ کی نصیحت ایک کان سے سن کر دوسرے کان سے نکال دیتا۔سب گھر والے اس کی اس عادت سے بہت تنگ تھے۔وہ گھر کی ساری جمع پونجی اپنے نشے کی بُری عادت میں صرف کر دیتا۔
اس کا ایک ہی بھائی عمران تھا،جو بہت محنتی تھا۔عامر کے والد تین سال پہلے وفات پا گئے۔ان کی وفات کے بعد عمران نے اپنی تعلیم ادھوری چھوڑ کر گھر کا خرچ سنبھال لیا۔وہ صبح سویرے کام کی تلاش میں گھر سے نکل جاتا اور شام کو واپس لوٹ آتا،لیکن عامر بُری صحبت میں پڑ گیا اور اسے نشے کی لت پڑ گئی۔
اس کے گھر والوں نے اسے بہت سمجھایا، لیکن اس کے کان پر جوں تک نہ رینگتی۔اس کے دوست اسے اس کے گھر والوں کے خلاف ورغلاتے اور وہ ان کی باتوں میں آجاتا۔

(جاری ہے)


ایک روز عامر نشہ کرکے رات کو دیر سے گھر پہنچا اور چلا کر اپنی والدہ سے کھانا مانگا تو اس پر اس کی والدہ نے کہا:”عامر بیٹا!گھر میں کچھ کھانے کو نہیں ہے۔


یہ سن کر عامر طیش میں آگیا،کیونکہ اسے بہت زیادہ بھوک لگ رہی تھی اور چلا چلا کر اپنی والدہ کو بُرا بھلا کہنے لگا۔
عمران نے اسے روکا،مگر اس نے کسی کی ایک نہ سنی۔
عمران نے اس کے منہ پر تھپڑ مارا۔ان کی والدہ یہ سب دیکھ کر بلک بلک کے رو رہی تھیں۔

اگلی صبح ماں نے عامر سے کہا:”پہلے کام کر،رقم لا،پھر گھر میں کھانا پکے گا۔“
یہ سن کر عامر آگ بگولہ ہو گیا۔وہ اپنی ماں کو دھکا دے کر وہاں سے باہر نکل گیا۔جب وہ اپنے دوستوں کے پاس پہنچا تو اس کے پاس پیسے نہ ہونے کی وجہ سے اس کے دوست اس سے جھگڑا کرنے لگے اور اسے اتنا مارا کہ وہ زخمی ہو کر زمین پر گر پڑا۔
وہ گلی میں بے ہوش پڑا تھا۔تب چچا کرم داد کا وہاں سے گزر ہوا۔انھوں نے عامر کو اس حالت میں پایا اور وہ اسے اسپتال لے گئے اور وہاں سے جب اس کے گھر میں اس کی ماں کو بتایا تو وہ بہت پریشان ہوئی۔جب عمران واپس آیا تو اس کے ہاتھ میں مٹھائی کا ڈبا تھا اور وہ بہت خوش لگ رہا تھا،کیونکہ اس کی ایک فیکٹری میں نوکری لگ گئی تھی۔

اس کی والدہ بہت خوش ہوئیں،لیکن جب عمران کو عامر کی اس بات کا علم ہوا تو وہ بہت پریشان ہوا۔اب عامر کو اپنے بُرے رویے اور بُری صحبت کی سزا مل گئی تھی۔وہ اب بھی نقاہت محسوس کررہا تھا۔
اس نے اپنی والدہ سے اپنے بُرے رویے اور بُری صحبت کی معافی مانگی تو اس کی والدہ نے اسے معاف کر دیا۔
کچھ دن بعد عامر نے ایک سرکاری اسکول میں داخلہ لے لیا۔اب عامر دل لگا کر پڑھائی کرنے لگا۔وقت کے ساتھ ساتھ ان کے گھریلو حالات اچھے ہو گئے۔

مزید اخلاقی کہانیاں

Shikar Tamasha

شکار تماشا

Shikar Tamasha

Acha Larka Pakka Dost

اچھا لڑکا پکا دوست۔۔تحریر: مختار احمد

Acha Larka Pakka Dost

Namkin Lemo

نمکین لیموں

Namkin Lemo

Bhool Bhulakar

بھول بھلکڑ

Bhool Bhulakar

Rainbow Kiya Hai

قوس قزح کیا ہے

Rainbow Kiya Hai

Main Hoon Mars

میں ہوں مریخ

Main Hoon Mars

Bachoon K Jamil Jalibi

بچوں کے جمیل جالبی

Bachoon K Jamil Jalibi

Malomat

معلومات

Malomat

Maila Aur Bail

میلا اور بیل

Maila Aur Bail

Haal Mein Maazi

حال میں ماضی

Haal Mein Maazi

Main Kaghaz Ka Register Hoon

میں کاغذ کا رجسٹر ہوں

Main Kaghaz Ka Register Hoon

Bad Gumani

بد گمانی

Bad Gumani

Your Thoughts and Comments