App Apne Bachoon Ko Motape Se Bacha Sakti Hain

آپ اپنے بچوں کو موٹاپے سے بچاسکتی ہیں!

ہفتہ جون

App Apne Bachoon Ko Motape Se Bacha Sakti Hain
فاروق احمد انصاری
ہماری ماؤں کو لگتا ہے کہ بچوں کو ہر وقت کھلانا پلانا انھیں صحت مند بناتا ہے اور اس کوشش میں وہ برگر ،چپس،پیٹس ،کوکیز،ڈونٹس،کیک غرض جو کچھ بھی ہاتھ آئے،وہ انھیں کھلا دیتی ہیں۔پھر کچھ عرصے بعد جب بچوں کا جسم فربہ ہونا شروع ہوتا ہے تو پریشانی لاحق ہو جاتی ہے کیونکہ موٹاپا بہت سی بیماریوں کا پیش خیمہ ہے ۔

دراصل بچے وہی کھاتے ہیں جو والدین کھانا پسند کرتے ہیں ،اسی لئے والدین خصوصاً ماؤں کو اس سلسلے میں ذرا احتیاط برتنے کی ضرورت ہے۔
عالمی ادارہ صحت کے مطابق دنیا بھر میں ترقی پذیر ممالک میں فربہ بچوں کی تعداد میں مسلسل اضافہ خطرے کا الارم بجا رہا ہے۔ادارے کے مطابق ان ممالک کو ترجیحی بنیادوں پر اس مسئلے سے نمٹنے کے لیے کام کرنا ہو گا،ورنہ بچوں کا موٹاپا مستقبل میں انہیں بہت سی بیماریوں میں مبتلا کر سکتا ہے ۔

(جاری ہے)

افریقہ میں گزشتہ بیس برسوں میں موٹے بچوں کی تعداد دُگنی ہو چکی ہے۔
ماہرین(Body Mass BMI Index)کا سہارا لیتے ہوئے انسانی جسم کو قد،وزن اور عمر کے حساب سے پرکھتے ہیں۔اس کے بعد ہی اس بات کا تعین کیا جاتا ہے کہ کس کو وزن بڑھانے کی ضرورت ہے ،کس کا وزن درست ہے ،کس کا وزن زیادہ ہے اور کس کا وزن تشویش ناک حد تک زیادہ ہے ۔عالمی ادارہ صحت کہتا ہے کہ وزن میں زیادتی آگے چل کر زندگی میں بڑے طبی مسائل جیسا کہ ذیابیطس ،دل کی بیماریوں اور فالج کا سبب بن سکتی ہے ۔

اگر آپ اپنے بچوں میں موٹاپے کی وجہ جاننا چاہتی ہیں تو وہ کچھ یوں ہیں۔
بچوں کے کمرے میں ٹی وی
یونیورسٹی کا لج لندن کے سائنسدانوں کا کہنا ہے جن بچوں کے کمرے میں ٹی وی ہے ،ان میں دیگر ایسے بچوں کے مقابلے میں زائد وزن ہونے کا امکان زیادہ ہے ،جن کے کمرے میں ٹی وی موجود نہیں ہے ۔سائنسدانوں نے بتایا کہ لڑکیوں میں بطور خاص یہ بات سامنے آئی ہے کہ وہ جتنا زیادہ وقت ٹی وی دیکھنے میں گزارتی ہیں،ان کا وزن اتنا ہی زیادہ بڑھتا ہے ۔

محققین کا کہنا ہے کہ اب یہ دیکھنا باقی ہے کہ آیا یہی حال لیپ ٹاپ اور فون کے معاملے میں بھی ہے یا نہیں۔یہ تحقیق انٹر نیشنل جرنل آف اوبیسیٹی میں شائع ہوئی ہے،جس میں برطانیہ کے 12ہزار بچوں کے اعداد و شمار کا تجزیہ کیا گیا ہے ۔
سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ ان میں سے نصف سے زیادہ بچوں کے کمروں میں سات سال کی عمر سے ٹی وی ہیں۔محققین نے بچوں کی 11سال کی عمر میں بی ایم آئی یعنی قد اور وزن کے تناسب سے جسم میں چربی کی جانچ کی ۔

مشاہدے میں یہ بات سامنے آئی کہ جن لڑکیوں کے کمروں میں سات سال کی عمر میں ٹی وی تھے،ان میں سے 30فیصد لڑکیاں اسی عمر کی دیگر ایسی لڑکیوں کے مقابلے میں زائد وزن پائی گئیں،جن کے کمروں میں ٹی وی نہیں تھا۔لڑکوں کے معاملے میں یہ خطرہ تقریباً 20فیصد ہے۔
نیند کی کمی
برطانیہ میں کی گئی ایک طبی تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ جو بچے نیند کی طبعی مقدار پوری نہیں کر پاتے ،ان میں بڑے ہونے کے ساتھ موٹاپے کا شکار ہونے کے امکانات ہوتے ہیں۔

برطانوی تحقیق کے دوران 18سال سے کم عمر کے 75ہزار 499بچوں کی نیند کے معمولات کا مطالعہ کیا گیا ہے ۔ماہرین صحت کا کہنا ہے کہ چار ماہ سے 11ماہ تک کے بچوں کو کم سے کم12سے15گھنٹے اور دوسال کی عمر کے بچوں کو 11سے14گھنٹے سونا چاہیے۔برطانیہ کی ”واریک“یونیورسٹی کے ماہرین کی تیار کردہ تحقیق،سائنسی جریدے’Sleep‘میں شائع کی گئی ہے ۔خیال رہے کہ یہ تحقیق جنوری 2018ء میں امریکا میں کی گئی ایک تحقیق کا تسلسل ہے ،جس میں نیند کی کمی اور موٹاپے کے درمیان تعلق کا انکشاف کیا گیا تھا۔

امریکی رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ وقفے وقفے سے بچوں کا سونا ان کے کھانے پینے کی عادات تبدیل کرنے کے ساتھ ان کے وزن میں تبدیلی اور غیر معمولی موٹاپے کا سبب بن سکتا ہے۔
گھر کا ماحول
اپنے گھر میں روز مرہ کے کھانے میں صحت بخش غذائیں مثلاً تازہ اور صاف پانی کی سبزیاں،پھل،اناج ،دالیں اور پروٹین شامل کیجیے۔پروسیسڈ فوڈ،چینی والے مشروبات ،fizzy drinks،زیادہ نمک ،نشاستہ ،چینی،چکنائی والے کھانے اور فاسٹ فوڈ کا استعمال کم سے کم کردیں۔

اپنے بچوں کے ساتھ مل بیٹھ کر اچھے ماحول میں کھاناکھائیں ۔تحقیق سے یہ ثابت ہوا ہے کہ بچے اچھے ماحول میں پیش کیا گیا کھانا کھانا زیادہ پسند کرتے ہیں ۔کھانے کے دوران ٹی وی دیکھنے سے پر ہیز کیجیے،یہ وقت اپنی فیملی اور بچوں کو دیجیے۔
بچوں سے کام کرائیں
بچوں سے گھر کے چھوٹے موٹے کام کرواتی رہیں۔اس سے ان کے اندر احساس ذمہ داری بڑھے گا اور وہ متحرک بھی رہیں گے۔


خود سبزیاں اُگائیں
اپنے گھر میں خود ہی سبزیاں اُگائیں اور بچوں کو بھی اس میں مشغول رکھیں۔اگر آپ کے پاس کو ئی کھلا احاطہ نہیں ہے تو گملوں میں بھی سبزیاں اُگائی جا سکتی ہیں جبکہ چھت پر بھی باغبانی کی جاسکتی ہے ۔اس طرح نہ صرف آپ بچوں کو کوئی جسمانی سرگرمی دے سکتی ہیں بلکہ انہیں موٹاپے سے بھی بچا سکتی ہیں۔
تاریخ اشاعت: 2019-06-22

Your Thoughts and Comments

Special Myths About Parenthood - Bachon Ki Parwarish Aur Ghalat Nazriat article for women, read "App Apne Bachoon Ko Motape Se Bacha Sakti Hain" and dozens of other articles for women in Urdu to change the way they live life. Read interesting tips & Suggestions in UrduPoint women section.