مٹہ ضلع سوات میں طویل غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کا سلسلہ بند کیا جائے، محمود خان وزیر ثقافت خیبرپختونخوا

پیر اگست 18:27

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 07 اگست2017ء) صوبائی وزیر کھیل و ثقا فت، میوزیم و امور نوجوانان اور پاکستان تحریک انصاف ملا کنڈ ریجن کے صدر محمود خان نے وفاقی حکومت اور واپڈا حکام سے کہا ہے کہ تحصیل مٹہ ضلع سوات میں طویل و ظالمانہ اور غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ ، اوور لوڈنگ اور کم وولٹیج کے خاتمے کیلئے فوری طور پر عملی اقدامات اٹھائے جائیں ورنہ تحصیل مٹہ کے عوام واپڈا کے خلاف احتجاج کرینگے جسکی وجہ سے امن و امن کی صورتحال خراب ہوگی اور اس صورت میں اسکی تمام تر ذمہ داری وفاقی حکومت اور واپڈا حکام پر ہوگی۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے پیر کے روز تحصیل مٹہ کے بازار چوک میں واپڈا کے خلاف پر امن احتجاجی مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر تحصیل مٹہ کے ناظم عبداللہ خان، نائب ناظم محمد حکیم خان، ضلعی وتحصیل کونسلر کے علاوہ عمائدین علاقہ کثیر تعداد میں موجود تھے۔

(جاری ہے)

اس موقع پر مٹہ سوات کے تمام بازار اور ٹرانسپورٹ دو گھنٹے کیلئے مکمل طور پر بند کئے گئے۔

جبکہ ا حتجاجی مظاہرے سے ضلع کونسلر رشید عالم خان اور پی ٹی آئی کے ممتاز رہنما اختر علی خان نے بھی خطاب کیا ۔ صوبائی وزیر نے کہاکہ ضلع سوات کی تحصیل مٹہ کے عوام واپڈا کی0 10 فیصد بلز ادا کر رہے ہیں۔ لیکن اسکے باوجود سابقہ وزیر اعظم کے مشیر امیر مقام کی ذاتی ایماء پر واپڈا حکام تحصیل مٹہ کے عوام پر ظالمانہ غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کروا رہے ہیںتحصیل مٹہ کے عوا م کا قصور یہ ہے کہ انہوں نے نام نہاد اور موقع پرست سیاستدانوں کو مسترد کرتے ہوئے پاکستان تحریک انصاف کو ووٹ دیاتھا۔

انہوں نے کہا کہ وزیر اعلیٰ صوبہ خیبر پختونخوا پروزیر خٹک نے وفاقی حکومت سے کہا تھا کہ واپڈا صوبہ کے حوالے کرے جو ایک مہینے کے اندر اندر واپڈا کو ٹھیک کرکے غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ کا خاتمہ کریںگے۔انہوں نے واپڈا حکام اور انتظامیہ کو وارننگ دیتے ہوئے کہا کہ آج ہم پرامن احتجاج کر رہے ہیں اگر ظالمانہ غیر اعلانیہ لود شیڈنگ کا خاتمہ نہیں ہوا تو آئندہ واپڈا اور انتظامیہ کے خلاف سخت احتجاج کریںگے جس میں واپڈا کے فیڈر، گرڈ سٹیشن اور دفاتر کا گھیرائو کرینگے جس کی تمام تر ذمہ داری وفاقی حکومت اور واپڈا حکام پر ہوگی۔