لاہور ہائیکورٹ نے چیئرمین لاہوربورڈکے عدالتی احکامات پر عمل درآمد سے متعلق زبانی بیان کو مسترد کر دیا

جمعہ اپریل 19:19

لاہور ہائیکورٹ نے چیئرمین لاہوربورڈکے عدالتی احکامات پر عمل درآمد ..
لاہور۔20 اپریل(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 20 اپریل2018ء) لاہور ہائیکورٹ نے چئیرمین بورڈ آف انٹرمیڈیٹ اینڈ سیکنڈری ایجوکیشن لاہورکے عدالتی احکامات پر عمل درآمد سے متعلق زبانی بیان کو مسترد کر دیا اور ہدایت کی کہ عدالتی احکامات پر عملدرآمد رپورٹ بذریعہ درخواست داخل کیا جائے۔

(جاری ہے)

لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس شجاعت علی خان نے عبدالشکور اور دیگر کی درخواستوں پر سماعت کی جس میں عدالتی حکم کے باوجود بورڈ آف انٹرمیڈیٹ اینڈ سیکنڈری ایجوکیشن میں درجہ ایک سے گیارہ کے ملازمین کو نوکریوں پر مستقل نہ کرنے کے اقدام کو چیلنج کیا گیا ہے عدالتی حکم پر چئیرمین بورڈ آف انٹرمیڈیٹ اینڈ سیکنڈری عدالت میں پیش ہوئے اور موقف اختیار کیا کہ عدالتی حکم پر تمام ملازمین کو مستقل کر دیا گیا جس پر عدالت نے چئیرمین بورڈ کا زبانی بیان مسترد کردیا اور ہدایت کی کہ عدالتی حکم پر عملدرآمد رپورٹ بذریعہ درخواست ہائیکورٹ داخل کی جائے جس کی کاپی درخواستگزار کو بھی فراہم کی جائے عدالت نے درخواستگزار کے وکیل سے کہا کہ وہ عدالتی احکامات پر عملدرآمد رپورٹ کاجائزہ لیں اور ضروری سمجھیں تو اس پر اعتراضات داخل کریں عدالت نے چئیرمین بورڈ کی آئندہ سماعت پر حاضری کے لیے استثنٰی کی درخواست بھی مسترد کردی۔