راہبر راہزن بن جائیں تو عوام اپنے گھروں میں چین کی نیند نہیں سو سکتے ‘‘حافظ محمد ادریس

امت مسلمہ کی قیادت متحد ہو کر ہی مسائل کی د لدل سے باہر نکل سکتی ہے ‘نائب امیر جماعت اسلامی

جمعہ مئی 19:28

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 25 مئی2018ء) نائب امیر جماعت اسلامی پاکستان حافظ محمد ادریس نے کہا ہے کہ راہبر راہزن بن جائیں تو عوام اپنے گھروں میں چین کی نیند نہیں سو سکتے ، امت مسلمہ کی بدحالی اور بے قدری کے اصل ذمہ دار وہ حکمران ہیں جو عوام کی مرضی کے خلاف اقتدار کے ایوانوں میں براجمان ہیں ، محمد بن قاسم نے ایک بہن کی پکار پر سمندر کا سینہ چیر کر راجہ داہر کو عبرتناک شکست سے دوچار کردیا تھا لیکن آج فلسطین ، کشمیر اور برما سمیت ہر جگہ سے قوم کی بیٹیاں چیخ و پکار کر رہی ہیں مگر مسلم حکمران بے حسی اور بے شرمی کی چادر اوڑھ کر سوئے ہوئے ہیں ، رمضان مسلمانوں کو یہ پیغام دیتاہے کہ اگر سربلندی چاہتے ہو تو خوف خدا رکھنے والی جرأت مند قیادت کا انتخاب کرو جو دشمن کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر بات کر سکیں ، سندھ سے اسلام برصغیر پاک و ہند میں پھیلا اسی لیے اسے باب الاسلام کے نام سے یاد کیا جاتاہے ۔

(جاری ہے)

جامع مسجد منصورہ میں نماز جمعہ کے اجتماع خطاب کرتے ہوئے حافظ محمد ادریس نے کہاکہ رمضان ذاتی محاسبے کا مہینہ ہے ۔ اسلام کو اللہ تعالیٰ نے ہمیشہ غلبہ عطا فرمایا کیونکہ اسلام مغلوب ہونے کے لیے نہیں ، غالب رہنے کے لیے آیاہے ۔ انہوں نے کہاکہ امت مسلمہ اس وقت مغلوب ہوتی ہے جب اسلام اسے ایک وادی میں پکار رہا ہوتاہے اور وہ اپنی مرضی سے کسی دوسری وادی میں بھٹک رہی ہوتی ہے ۔

اسلام کا تقاضا ہے کہ انسان خود کو اللہ کی مرضی کے تابع کردے مگر انسان شیطان کے بہکاوے میں آ کر خود سری اختیار کر لیتاہے جس سے اللہ کی نصرت سے محروم ہو جاتاہے اور پھر شیطان اسے ذلیل و خوار کر کے چھوڑتاہے ۔ جب ایمان مردہ اور ضمیر ختم ہو جائے تو پھر فوجوں کے لائو لشکر اور وسائل کی فراوانی کے باوجود عزت و وقار رخصت ہو جاتاہے ۔ آج دنیا بھر میں مسلمانوں کی قابل رحم حالت کے اصل ذمہ داروہ حکمران ہیں جو اللہ کی بجائے کبھی امریکہ اور کبھی برطانیہ کی چوکھٹ پر سجدہ ریز ہوتے ہیں ۔

انہوںنے کہاکہ آج ضرورت اس امر کی ہے کہ قوم اپنا محاسبہ کرے اور خود احتسابی کے بعد ایسی قیادت کا انتخاب کرے جو امت کے اجتماعی مسائل کا ادراک اور انہیں حل کرنے کی صلاحیت رکھنے والی ہو ۔ انہوںنے کہاکہ 2018 ء کے انتخابات قوم کے پاس بہترین موقع ہیں کہ وہ چوروں اور لٹیروں کی بجائے دینی جماعتوں کے دیانتدار اور باکردار امیدواروں کو ووٹ دے ۔ انہوں نے کہاکہ امت مسلمہ کی قیادت متحد ہو کر ہی مسائل کی د لدل سے باہر نکل سکتی ہے ۔