الیکشن کمیشن نے نگران حکومت کی عہدیداروں کے حوالے سے بڑا فیصلہ کر لیا

نگران حکومت کے عہدیداروں سے اثاثوں کی تفصیلات طلب کرنے کا فیصلہ کرلیا،الیکشن کمیشن

Muqadas Farooq مقدس فاروق اعوان منگل مئی 12:16

الیکشن کمیشن نے نگران حکومت کی عہدیداروں کے حوالے سے بڑا فیصلہ کر لیا
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔29مئی۔2018ء) نگران حکومت کے عہدیداروں سے اثاثوں کی تفصیلات طلب کرنے کا فیصلہ کرلیاگیا۔قومی اخبار کیا یک رپورٹ کے مطابق الیکشن کمیشن نے نگران حکومت کے عہدیداروں سے اثاثہ جات کی تفصیلات طلب کرنے کا فیصلہ بھی کر لیا ہے۔۔الیکشن کمیشن نے کہا کہ نگراں حکومت کے عہدیداروں کو3روز میں اثاثوں کی تفصیلات پیش کرنا ہونگی۔

جب کہ 2018کے انتخابات کے حوالے سے الیکشن کمیشن کا کہنا ہے کہ 2018کے انتخابی اخراجات کا تخمینہ21ارب ہے۔ ۔25 جولائی 2018کو ہونے والے انتخابات ملکی تاریخ کے سب سے مہنگے اور سب سے بڑے انتخابات ہوں گے۔2018کے انتخابات کے اخراجات کا ابتدائی تخمینہ 21 ارب روپے لگایا گیا ہے۔خصوصی فیچرز والے بیلٹ پیپر ز کی خریداری اور چھپائی پر اڑھائی ارب روپے خرچ آئے گا۔

(جاری ہے)

سیکیورٹی، جدید ٹیکنالوجی کا استعمال ۔پولنگ عملے کی خصوصی تربیت اور حساس پولنگ اسٹیشن پر سی سی ٹی وی کیمروں کی تنصیب کے باعث 25 جولائی کے انتخابات ملکی تاریخ کے مہنگے انتخابات ہوں گے ۔2013 کے انتخابات کی نسبت 2018 کے انتخابات پر 425 فیصد زیادہ خرچ آ ئے گا۔یاد رہے کہ 25 جولائی 2018 کو ہونے والے عام انتخابات ملکی تاریخ کے سب سے مہنگے اور سب سے بڑے انتخابات ہوں گے۔

2018کے انتخابات کے حوالے سے پولنگ عملے کی تربیت پر بھی خاص توجہ دی جا رہی ہے،جب کہ دوسری طرف سیاسی جماعتوں کی بھی الیکشن کے حوالے سے تیاری زور و شور سے جاری ہے،اور الیکشن سے قبل سیاسی جوڑ تو ڑ بھی جاری ہے،ہر پارٹی اگلے انتخابات میں جیت کے لیے اپنی سر توڑ کوششیں کر رہی ہے۔اور اس حوالے سے انتخابات میں مضبوط امیدوار لانے کی بھی کوشش کر ہی ہے۔۔پی ٹی آئی کی جماعت میں بھی اب تک کئی سیاسی پارٹی کے رہنماؤں نے شمولیت اختیار کی ہے۔