عمران خان کا عامر لیاقت سے فون پر رابطہ۔۔ اہم مشورہ بھی دے دیا

پی ٹی آئی چئیرمین عمران خان کا ڈاکٹر عامر لیاقت حسین کو پارٹی چھوڑنے سے متعلق کوئی بھی فیصلہ جلد بازی میں نہ کرنے کا مشورہ

Muqadas Farooq مقدس فاروق اعوان بدھ جون 11:32

عمران خان کا عامر لیاقت سے فون پر رابطہ۔۔ اہم مشورہ بھی دے دیا
اسلام آباد (اُردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین۔06 جون 2018ء) پاکستان تحریک انصاف کے چئیرمین عمران خان نے ڈاکٹر عامر لیاقت حسین کو ملاقات کے لیے بنی گالا بلا لیا۔تفصیلات کے مطابق ڈاکٹر عامرلیاقت حسین کی پی ٹی آئی میں شمولیت کی وجہ سے بہت سارے لوگوں کو اعتراض تھا۔۔سوشل میڈیا پر بھی عامر لیاقت حسین کو پارٹی میں شامل کرنے پر پی ٹی آئی کی قیادت پر خوب تنقید کی گئی جب کہ پارٹی کے اندر بھی کچھ رہنماعامر لیاقت کی پی ٹی آئی میں شمولیت پر نا خوش تھے۔

تاہم عامر لیاقت حسین نے بھی کچھ عرصہ گزرنے کے بعد اپنے رنگ دکھانے شروع کر دئیے۔جب تحریک انصاف نے پارٹی ٹکٹ دینے سے متعلق عامر لیاقت کو سرخ جھنڈی دکھا ئی تو عامر لیاقت نے بھی ٹویٹ کیا اور کہا کہ پی ٹی آئی کو اپنا گھر سمجھ کرآیا تھا۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ فردوس شمیم نے مجھے اپنے گھر میں ٹکٹ دینے سے انکار کیا۔فردوس شمیم نے جو کہا وہ عمران خان کی عزت کی خاطربیان نہیں کرسکتا۔

تحریک انصاف کے رہنما عامر لیاقت حسین اور پارٹی قیادت کے درمیان ٹکٹ کے معاملے پر اختلافات شدت اختیار کر گئے ۔تاہم اب میڈیا رپورٹس کے مطابق پاکستان تحریک انصاف کے چئیرمین عمران خان نے ڈاکٹر عامر لیاقت حسین نے فون پر رابطہ کیا ہے۔۔عمران خان نے ڈاکٹر عامر لیاقت کو ملاقات کے لیے بنی گالا بھی بلایا ہے۔ٹیلی فونک رابطے کے دوران عمران خان نے عامر لیاقت کو ایک مشورہ بھی دیا ہے اور کہا ہے کہ وہ پارٹی چوھڑنے سے متعلق کوئی بھی فیصلہ جلد بازی میں نہ کریں۔

یاد رہے کہ عامر لیاقت حسین نے اس سے پہلے کہا تھا کہ کہ قوی امکان یہی ہے کہ وہ تحریک اںصاف کو خیر آباد کہہ دیں گے۔ تاہم کوششیں ہو رہی ہیں کہ کسی طرح انہیں پارٹی چھوڑنے سے روک لیا جائے۔ عامر لیاقت حسین کا کہنا ہے کہ انہیں نہیں پتہ کہ اس تمام صورتحال میں کیا کریں، تاہم وہ یہی کہیں گے کہ روک سکو تو روک لو۔ عامر لیاقت حسین کا کہنا تھا کہ ان کے متعلق کافی غلط باتیں کی گئی ہیں۔ میں تحریک انصاف کو اپنا گھر سمجھ کر یہاں آیا تھا، تاہم انہیں فردوس شمیم نقوی کی جانب سے پھر بھی ٹکٹ نہیں دیا گیا۔ فی الحال وہ عمران خان کی عزت رکھتے ہوئے کچھ نہیں کہہ رہے۔ ورنہ اگر وہ بولنے پر آگئے تو کسی کیلئے بھی الیکشن جیتنا بے حد مشکل ہو جائے گا۔