شادی ہالز والے اپنا بوریا بستر اٹھائیں، شادی ہالز سمیٹ کر کوئی دوسرا کاروبار کریں ،ْ چیف جسٹس ثاقب نثار

پیر جون 15:20

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 25 جون2018ء) چیف جسٹس ثاقب نثار نے غیر قانونی شادی ہالز سے متعلق از خود نوٹس کی سماعت کے دوران ریمارکس دیتے ہوئے کہا ہے کہ شادی ہالز والے اپنا بوریا بستر اٹھائیں، شادی ہالز سمیٹ کر کوئی دوسرا کاروبار کریں ۔۔چیف جسٹس کی سربراہی میں غیر قانونی شادی ہالز سے متعلق از خود نوٹس کی تین رکنی بینچ نے سماعت کی جس دوران چیف جسٹس نے پوچھا کہ وفاقی ترقیاتی ادارے سی ڈی اے کے حکام سے پوچھا کہ غیر قانونی شادی ہالز کو کتنے نوٹسز دئیے، چیف جسٹس نے کہا کہ غیر قانونی شادی ہالز والے تاخیری حربے استعمال کر رہے ہیں۔

سماعت کے شادی ہالز کے وکیل نے کہا کہ سی ڈی اے کو اپنی حدود کا علم نہیں، سی ڈی اے نے کئی شادی ہالز کو زمین الاٹ نہیں کی۔ چیف جسٹس نے کہا کہ کئی شادی ہالز والے سی ڈی اے کو فیس دینے کو تیار نہیں، شادی ہالز کے پاس کوئی سائیٹ پلان یا نقشہ نہیں ہے، کیوں نہ غیر قانونی شادی ہالز کو گرا دیا جائے۔

(جاری ہے)

شادی ہالز کے وکیل نے بتایا کہ سی ڈی اے کو لائسنس فیس ادا کر رہے ہیں، سی ڈی اے کی فیس پر کوئی اعتراض نہیں۔

چیف جسٹس نے کہا کہ شادی ہالز والے اپنا بوریا بستر اٹھائیں، شادی ہالز سمیٹ کر کوئی دوسرا کاروبار کریں، وکیل نے کہا کہ سی ڈی اے کو زمین کی نوعیت کی تبدیلی کے واجبات کیوں دیں۔ سی ڈی اے حکام نے کہا کہ زرعی زمین کو کمرشل میں تبدیل کرنے کے واجبات ادا کرنے پڑھتے ہیں۔۔چیف جسٹس نے کہا کہ اراضی کی نوعیت تبدیلی کے چارجز نہیں دینے تو مارکیز اٹھا دیں، من مرضی سے کوئی تعمیرات نہیں کر سکتا، چیف جسٹس نے کہا کہ سی ڈی اے نے عدالتی حکم پر شادی ہالز کے لیے رولز بنائے، ہماری مہربانی کا غلط فائدہ نہ اٹھایا جائے، کیا زرعی زمین پر سٹیل مل اور فیکڑیاں لگ جائیں تو کوئی نہ پوچھے۔