نوازشریف کی اپیل ،ہائی کورٹ کی پیپر بک کو دوبارہ ترتیب دینے کی ہدایت،مکمل ریکارڈ دوبارہ پیش کرنے کا حکم

ہائی کورٹ کے دو رکنی بینچ نے سابق و زیر اعظم نوازشریف کی ایک دن کیلئے حاضری کی استثنیٰ کی درخواست منظور کرلی

منگل اپریل 17:08

نوازشریف کی اپیل ،ہائی کورٹ کی پیپر بک کو دوبارہ ترتیب دینے کی ہدایت،مکمل ..
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 23 اپریل2019ء) اسلام آباد ہائی کورٹ نے نوازشریف کی العزیزیہ سٹیل مل ریفرنس میں مرکزی اپیل پر سماعت کے دور ان پیپر بک کو دوبارہ ترتیب دینے کی ہدایت کرتے ہوئے پیپر بکس میں مکمل ریکارڈ دوبارہ پیش کرنے کا حکم دیاہے جبکہ نوازشریف کی ایک دن کیلئے حاضری کی استثنیٰ کی درخواست منظور کرلی ۔

منگل کو سابق وزیراعظم نوازشریف کی العزیزیہ سٹیل مل ریفرنس میں سزا کے خلاف مرکزی اپیل پر سماعت جسٹس عامر فاروق اور جسٹس محسن اختر کیانی پرمشتمل ڈویژن بینچ نے کی ۔سابق وزیر اعظم نوازشریف کے وکیل خواجہ حارث نے دلائل دیتے ہوئے کہاکہ پیپر بک ہمیں مل گئی ہے لیکن یہ مکمل نہیں ہیں۔خواجہ حارث نے کہاکہ پیپر بکس میں بہت سی دستاویزات موجود نہیں ہیں،پیپر بک کو ابھی درست کرنے کی ضرورت ہے۔

(جاری ہے)

انہوںنے کہاکہ پیپر بکس میں سلیکٹڈ ریکارڈ لگا ہے مکمل نہیں۔ انہوںنے کہاکہ میں نے عدالت کو نامکمل ریکارڈ کی نشاندہی کردی ہے۔جسٹس عامر فاروق نے کہاکہ ریکارڈ تو مکمل آنا چاہیے۔جسٹس عامر فاروق نے کہاکہ پیپر بکس اپنی سہولت منگوائی جاتی ہے تاکہ مکمل ریکارڈ ہو۔عدالت عالیہ نے پیپر بک کو دوبارہ ترتیب دینے کی ہدایت کرتے ہوئے پیپر بکس میں مکمل ریکارڈ دوبارہ پیش کرنے کا حکم دیا ۔ عدالت نے پیپر بکس کو ترتیب دینے کیلئے منور دگل ایڈووکیٹ اور نیب کے ایک نمائندے کو شامل ہونے کی ہدایت کرتے ہوئے نواز شریف کی منگل کو حاضری سے استثنیٰ کی درخواست منطور کرلی ۔ بعد ازاں عدالت نے نواز شریف کی اپیل پر سماعت نو مئی تک ملتوی کر دی ۔