Live Updates

مقبوضہ کشمیر میں صورتحال کی بہتری کیلئے وقت درکار ہے، بھارتی سپریم کورٹ

سپریم کورٹ کی جانب سے اگلے چند روز میں اس درخواست کے حوالے سے کوئی حکم جاری کیے جانے کا امکان

بدھ اگست 11:51

مقبوضہ کشمیر میں صورتحال کی بہتری کیلئے وقت درکار ہے، بھارتی سپریم ..
نئی دہلی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 14 اگست2019ء) بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کا حامل آرٹیکل 370 کی منسوخی، وادی میں انٹرنیٹ، موبائل سروس کی معطلی اور کرفیو کے نفاذ کے خلاف دائر درخواست کی فوری سماعت سے انکار کرتے ہوئے کہا ہے کہ صورت حال کو معمول پر آنے میں مزید وقت لگے گا۔خبرایجنسی رائٹرز کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں مسلسل نویں روز بھی کرفیو بدستور نافذ ہے جبکہ وادی کے مکینوں کو زندگی کی بنیادی ضروریات تک رسائی کو ممکن بنانے اور شہریوں کی نقل و حرکت اور دیگر ذرائع پر عائد پابندی کو ختم کرنے کے لیے سماجی کارکن نے سپریم کورٹ میں درخواست دائر کر دی ہے۔

درخواست گزار کے وکیل منیکا گوروسوامی کا کہنا تھا کہ عدالت کو فوری طور پر ہسپتالوں اور اسکولوں کی بحالی کے لیے اقدامات کرنے چاہیے۔

(جاری ہے)

ان کا کہنا تھا کہ یہ تمام باتیں میں نے سپریم کورٹ کو بتائی ہیں۔سپریم کورٹ کے جسٹس ارون مشرا کا کہنا تھا کہ حکومت مقبوضہ کشمیر کو جلد ازجلد معمول پر واپس لانا چاہتی ہے۔جسٹس ارون مشرا نے کہا کہ صورتحال ایسی ہے کہ کسی کو معلوم نہیں کہ کیا ہورہا ہے، حالات کو معمول پر لانے کے لیے ہمیں ان کو وقت دینا چاہیے، کوئی بھی ایک فیصد ذمہ داری نہیں لے سکتا نہیں چاہتا۔

ان کا کہنا تھا کہ کل اگر کچھ غلط ہوگیا تو اس کا ذمہ دار کون ہوگا۔درخواست گزار نے استدعا کی کہ کشمیر کے زیرحراست سیاسی قائدین کو رہا کیا جائے جنہیں مظاہروں کے دوران گرفتار کیے گئے 300 سے زائد افراد کے ساتھ حراست میں لیا جاچکا ہے۔سپریم کورٹ کی جانب سے اگلے چند روز میں اس درخواست کے حوالے سے کوئی حکم جاری کیے جانے کا امکان ہے۔اٹارنی جنرل کی-کے وینوگوپال نے سپریم کورٹ کو بتایا کہ سیکیورٹی کی صورت حال بہتر ہورہی ہے۔

عدالت کو مقبوضہ کشمیر کی صورت حال کے حوالے سے حکومت موقف دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مقبوضہ جموں کشمیر کی صورت حال کا جائزہ روزانہ کی بنیاد پر لیا جارہا ہے اور بہتری کے اشارے ہیں۔بھارتی وزارت داخلہ کے ترجمان نے ٹویٹر میں اپنے بیان میں دعویٰ کیا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میںپابندیوں میں مراحل کی بنیاد پر نرمی لائی جارہی ہے۔انہوں نے کہا کہ ‘پرامن جموں ڈویژن میں متعلقہ مقامی حکام کے جائزے کے بعد مواصلات کی بحالی معمول پر لائی جارہی ہے۔دوسری جانب بھارتی وزارت داخلہ کے ترجمان کے دعووں کی کسی بھی آزاد ذرائع نے تصدیق نہیں کی کہ پابندیوں میں کسی قسم کی نرمی لائی گئی ہے جبکہ مقبوضہ وادی میں مسلسل نویں روز بھی عوام فون اور انٹرنیٹ تک رسائی سے محروم رہے۔
مقبوضہ کشمیر کی خودمختاری ختم سے متعلق تازہ ترین معلومات