پلاسٹک ٹنل میں سبزیات کی بیماریوں کے تدارک و انسداد کیلئے بروقت اقدامات کو یقینی بنانے کی ہدایت کردی گئی

بدھ ستمبر 14:01

فیصل آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 16 ستمبر2020ء) محکمہ زراعت نے پلاسٹک ٹنل کے کاشتکاروں کو سبزیات کی بیماریوں کے تدارک و انسداد کیلئے بروقت اقدامات کو یقینی بنانے کی ہدایت کردی۔ محکمہ زراعت کے ترجمان نے اے پی پی کو بتایا کہ زمیندار و کاشتکار پلاسٹک ٹنل میں سبزیات کی بیماریوں اکھیڑا ، روئیں دار پھپھوند ، سفوفی پھپھوند،مرجھائو، اگیتا ، پچھتا جھلسائو، بلاسم اینڈ راٹ کے تدارک اور انسداد کیلئے بروقت اقدامات کو یقینی بنائیں تاکہ سبزیوں کی بیماریوں سے پاک اچھی پیداوار حاصل کرنے میں مدد مل سکے۔

انہوںنے کہاکہ سبزیات کی کاشت سے لے کر ان کی برداشت تک کے مراحل میں مذکورہ بیماریاں کسی بھی وقت ان پر حملہ آور ہو کر پیداوارکانقصان کر سکتی ہیں ۔

(جاری ہے)

انہوںنے کہاکہ سبزیات پر اکھیڑے کے حملہ کی صورت میں جس زمین پر اس بیماری کا حملہ ہو اس میں دو تین سال تک یہ فصل کا شت نہ کی جائے اور جون کے مہینہ میں متاثرہ زمین میں ہل چلا کر اسے کھلا چھوڑ دیاجائے اور بعد ازاں سبزیوں کے بیج کو موزوں زہر لگا کر کاشت کیاجائے۔

انہوںنے کہاکہ روئیں دار پھپھوند کاحملہ شروع ہونے سے قبل اس کا تدارک انتہائی مشکل ہوتاہے لہٰذا کاشتکار ٹنل میں درجہ حرارت اور نمی کو کنٹرول کرتے ہوئے پھپھوند کش زہر کا سپرے بھی کریں ۔ انہوںنے کہاکہ سفوفی پھپھوند پر قابو پانے کیلئے صبح یاشام کے وقت ٹنل میں سپرے کرتے ہوئے نمی کو بھی کنٹرول کیاجائے ۔انہوںنے بتایاکہ بیج کو موزوں پھپھوند کش زہر لگاکر کاشت کرنے سمیت فصلوں کا ادل بدل کرکے مرجھائو کی بیماری سے بچا جاسکتاہے۔

انہوںنے کہاکہ ٹنل میں زیادہ نمی ، اگیتے جھلسائو کاباعث بنتی ہے لہٰذا ٹنل کے اندر نمی کو مناسب حد تک رکھاجائے ۔ انہوںنے کہاکہ پچھیتے جھلسائو سے بچنے کیلئے قوت مدافعت کی حامل سبزیات کاشت کی جاسکتی ہیں۔ انہوںنے مزید بتایاکہ وائرسی بیماریوں سے سبزیوں کو بچانے کیلئے متاثرہ پودوں کو کھیت سے اکھاڑ کر دبا دیا جائے اور نرسری پر حملہ اور رس چوسنے والے کیڑوں کا بھی مکمل تدارک کیاجائے۔

بلاسم اینڈ راٹ کی بیماری کے بارے میں انہوںنے بتایاکہ یہ بیماری کیلشیم کی کمی اور نائٹروجن کھاد کی زیادتی سے پیداہوتی ہے اس لئے کھاد کی مناسب مقدار استعمال کرنے سے سمیت پنیری لگاتے وقت جڑوں کو زخمی ہونے سے بچایا جائے۔ انہوںنے سفید مولڈ کے بارے میں بتایاکہ اس بیماری سے بچنے کیلئے زمین کو زیادہ نمدار نہ رکھا جائے اور فصلوں کے مناسب ادل بدل سمیت پھپھوند کش زہر کااستعمال اس طرح کیاجائے کہ پودے کے ساتھ ساتھ دوائی زمین پر بھی گرے۔

متعلقہ عنوان :