اساتذہ کے الیکشن میں یونیورسٹی انتظامیہ کی مداخلت کا الزام بے بنیاد ہے‘ ترجمان شاہ عبداللطیف یونیورسٹی خیرپور

جمعرات اپریل 23:53

سکھر۔19اپریل(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 19 اپریل2018ء) شاہ عبداللطیف یونیورسٹی خیرپور کے ترجمان نے یونیورسٹی کے اساتذہ کے فرینڈز پروگریسو پینل کی جانب سے پریس کلب خیرپور میں پریس کانفرنس کے دوران اساتذہ کے الیکشن میں یونیورسٹی انتظامیہ کی مداخلت کے الزام کو سختی سے رد کرتے ہوئے اپنے پریس بیان جاری کرتے ہوئے آگاہی دی ہے کہ یونیورسٹی انتظامیہ نے اساتذہ کے الیکشن میں مکمل غیر جانبدار رویہ اختیار کیا ہے ۔

انتظامیہ الیکشن کے عمل میں کسی بھی پینل کی سرپرستی یا حمایت نہیں کررہی ہے اور نہ ہی فرینڈز پروگریسو پینل کے کسی ممبر کو ہراساں کیا ہے اور نہ ہی کوئی انتقامی کاروائی کی گئی ہے۔ الیکشن کا عمل اساتذہ کا جمہوری حق ہے۔ ترجمان نے واضح کیا کہ شہدادکوٹ کیمپس میں اسسٹنٹ ڈائریکٹر کے طور پر کام کرنے والے سید فاروق شاہ راشدی کو اضافی چارج دیا گیا ہے جو ایک قانونی عمل ہے۔

(جاری ہے)

سید فاروق شاہ راشدی کو اسسٹنٹ ڈائریکٹر کا اضافی چارج شہدادکوٹ کیمپس کے ڈائریکٹر کی انتظامی و تدریسی عمل میں مدد کیلئے دیا گیا ہے۔ ترجمان نے واضح کیا ہے کہ نازیہ سحر میمن لیکچرر شعبہ بزنس ایڈمنسٹریشن گھوٹکی کیمپس کو وضاحتی مراسلہ ان کی انتظامی ڈسپلن کی خلاف ورزی کرنے پر جاری کیا گیا ہے ۔ جس کا اساتذہ کے الیکشن کے عمل سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ یونیورسٹی انتظامیہ کی جانب سے کسی بھی استاد کو نوکری سے برطرف کرنے کی کوئی دھمکی نہیں دی گئی ہے۔ ترجمان نے لگائے گئے تمام الزامات کو سختی سے رد کرتے ہوئے تمام الزامات کو بے بنیاد قرار دیا ہے۔