احتساب عدالت، ایون فیلڈ ریفرنس میں استغاثہ کے گواہ ظاہر شاہ کے بیان پر مریم نواز اور کیپٹن (ر) محمد صفدر کے وکیل نے جرح مکمل کرلی

منگل اپریل 22:52

احتساب عدالت، ایون فیلڈ ریفرنس میں استغاثہ کے گواہ ظاہر شاہ کے بیان ..
اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 24 اپریل2018ء) سابق وزیر اعظم محمد نواز شریف ،ان کی صاحبزادی مریم نواز اور ممبر قومی اسمبلی کیپٹن (ر)محمد صفدر کے خلاف دائر ایون فیلڈ ریفرنس میں استغاثہ کے گواہ ظاہر شاہ کے بیان پر مریم نواز اور کیپٹن (ر) محمد صفدر کے وکیل نے جرح مکمل کرلی ہے۔منگل کو احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے ایون فیلڈ ریفرنس کی سماعت کی۔

اس موقع پر سابق وزیر اعظم محمد نواز شریف،، مریم نواز اور کیپٹن (ر) محمد صفدر عدالت میں پیش ہوئے۔ایون فیلڈ ریفرنس میں استغاثہ کے گواہ ڈی جی آپریشنز نیب ظاہر شاہ کے بیان پر مریم نواز اور کیپٹن (ر) محمد صفدر کے وکیل امجد پرویز نے جرح کی۔ ظاہر شاہ نے عدالت کو بتایا کہ والیم ٹین کی کاپی رجسٹرار سپریم کورٹ کے خط کے ذریعے حاصل کی جسے کوآرڈینیشن آفیسر نے وصول کیا تھا تاہم نیب نے سپریم کورٹ میں والیم ٹین وصول کرنے کی رسیونگ نہیں دی۔

(جاری ہے)

نیب کے گواہ ظاہر شاہ نے کہا کہ نیب پراسیکیوشن ونگ نے والیم ٹین کے لیے سپریم کورٹ کو خط لکھا تھا، والیم ٹین کا متعلقہ حصے کا تبادلہ تفتیشی افسر کے علاوہ کسی کے ساتھ نہیں کیا۔وکیل صفائی امجد پرویز نے سوال کیا کہ 27 مئی 2017 کو کیا آپ نے یوکے سنٹرل اتھارٹی کو خط لکھا جس پر گواہ ظاہر شاہ نے کہا کہ خط میں نے نہیں ، جے آئی ٹی نے لکھا تھا۔اس موقع پر نیب پراسیکیوٹر نے مداخلت کی تو مریم نواز کے وکیل نے کہا کہ 'پراسیکیوٹر صاحب آپ گواہ کو کیوں بتا رہے ہیں' جس پر نیب پراسیکیوٹر افضل قریشی نے کہا کہ میں کچھ نہیں بتارہا صرف تاریخ کے بارے میں بتایا ہے۔