کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی نے پاسکو سے 35ہزار میٹر ک ٹن گندم فاٹا کے عارضی طور پر نقل مکانی کرنے والے خاندانوں میں تقسیم کرنے کیلئے ورلڈ فوڈ پرگرام کو فراہمی ، پی آئی اے کو طیاروں کے انجن کی اوورہالنگ کے سلسلے میں درکار اخراجات پورے کرنے کیلئے 20 ارب روپے کی اضافی گارنٹی کی فراہمی، ایل این جی /آر ایل این جی کی پوری سپلائی چین کا احاطہ اورترسیل، وصولی اور بلنگ میں کمزوریوں کو دور کرنے کے لئے اوگرا آرڈیننس 2002 میں ترامیم اور تازہ پھلوں ،سبزیوں اور خشک پھلوں کی افغانستان سے درآمد پر ریگولیٹری ڈیوٹیز کے استثنیٰ کی منظوری دیدی

جمعہ مئی 16:30

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 11 مئی2018ء) وزیر اعظم شاہدخاقان عباسی کی زیر صدارت کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی نے پاسکو سے 35ہزار میٹر ک ٹن گندم فاٹا کے عارضی طور پر نقل مکانی کرنے والے خاندانوں میں تقسیم کرنے کیلئے ورلڈ فوڈ پرگرام کو فراہمی ، پی آئی اے کو طیاروں کے انجن کی اوورہالنگ کے سلسلے میں درکار اخراجات پورے کرنے کیلئے 20 ارب روپے کی اضافی گارنٹی کی فراہمی، ایل این جی /آر ایل این جی کی پوری سپلائی چین کا احاطہ اورترسیل، وصولی اور بلنگ میں کمزوریوں کو دور کرنے کے لئے اوگرا آرڈیننس 2002 میں ترامیم اور تازہ پھلوں ،سبزیوں اور خشک پھلوں کی افغانستان سے درآمد پر ریگولیٹری ڈیوٹیز کے استثنیٰ کی منظوری دیدی ۔

جمعہ کو وزیر اعظم شاہدخاقان عباسی کی زیر صدارت کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی (ای سی سی ) کا اجلاس وزیراعظم آفس میں ہوا ۔

(جاری ہے)

اجلاس نے پاسکو سے 35ہزار میٹر ک ٹن گندم فاٹا کے عارضی طور پر نقل مکانی کرنے والے خاندانوں(ٹی ڈی پیز) میں تقسیم کرنے کیلئے ورلڈ فوڈ پرگرام کو فراہم کرنے کی منظوری دی ۔ای سی سی نے پی آئی اے سی ایل کو طیاروں کے انجن کی اوورہالنگ کے سلسلے میں درکار اخراجات پورے کرنے کیلئے 20 ارب روپے کی اضافی گارنٹی فراہمی کی بھی منظوری دی ۔

اجلاس میں ایوی ایشن ڈویژن اور وزارت خزانہ کو ہدایت کی گئی کہ اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ ای سی سی کی جانب سے منظور کر دہ مالی معاونت صرف طے شدہ مقاصد کے لئے ہی استعمال ہو ۔ چیف ایگزیکٹو آفیسر پی آئی اے سی ایل نے اجلاس کو قومی ایئر لائن کو کی کارکردگی بہتر بنانے اور اسکے خسارے کو کم کرنے کے حوالے سے کیے جانے والے اقدامات پر پیش رفت کے بارے میں بریفنگ دی ۔

ای سی سی نے اوگرا ریگولیٹری فریم ورک میں ایل این جی /آر ایل این جی کی پوری سپلائی چین کا احاطہ کرنے اورترسیل ،وصولی اور بلنگ میں کمزوریوں کو دور کرنے کے لئے اوگرا آرڈیننس 2002میں ضروری ترامیم متعارف کرانے کی تجویز کی منظوری بھی دی ۔ای سی سی نے تازہ پھلوں ،سبزیوں اور خشک پھلوں کی افغانستان سے درآمد پر ریگولیٹری ڈیوٹیز کے استثنیٰ کی اصولی منظوری بھی دی جس کا اعلان وزیراعظم نے اپنے دورہ افغانستان میں کیا تھا ۔