بھارت کا غلطی سے سرحد عبور کرنیوالے 32 سالہ نوجوان کی شہریت کی تصدیق کیلئے پاکستانی حکام سے رابطہ

آصف سے متعلق ابھی مکمل تفصیلات فراہم نہیں کی گئیں تاہم نوجوان کے خاندان کا سراغ لگانے کی کوشش کی جارہی ہے‘حکام

جمعرات مئی 13:14

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 31 مئی2018ء) بھارت کی بارڈر سکیورٹی فورس نے غلطی سے سرحدعبورکرنیوالے 32 سالہ نوجوان کی شہریت کی تصدیق کے لئے پاکستانی حکام سے رابطہ کیا ہے، بھارت کی طرف سے بھیجی گئی اطلاعات میں کہا گیا ہے کہ آصف نامی نوجوان نے خودکشی کے ارادے سے سرحدعبورکی تھی۔نجی ٹی وی کے مطابق بھارت کی طرف سے پاکستانی حکام کوبھیجی گئی اطلاعات میں کہا گیا ہے کہ بارڈرسیکیورٹی فورس (بی ایس ایف ) نے مابوکی بارڈر ایریا سے ایک 32 سالہ نوجوان آصف کو پیر کے روزگرفتارکیا تھا ، آصف نامی یہ نوجوان قصورکے نواحی علاقہ جھلے کی کا رہائشی ہے، وہ اس ارادے سے پاکستانی سرحدعبورکرکے بھارت میں داخل ہوا کہ بی ایس ایف کے جوان اسے گولی ماردیں، وہ خودکشی کرنا چاہتا تھا تاہم اسے زندہ پکڑکرمقامی پولیس کے حوالے کردیا گیا ہے۔

(جاری ہے)

بھارتی حکام کی طرف سے یہ بھی بتایا گیا ہے کہ آصف اپنے بڑے بھائی کی سالی سے محبت کرتا تھا مگراس نے اس سے شادی سے انکارکردیا، اس لڑکی کی کسی اور جگہ شادی ہوگئی جہاں سے اس نے کچھ عرصے بعد طلاق لے لی، لڑکی کے طلاق لینے کے بعد آصف نے دوبارہ اس لڑکی کا رشتہ مانگا مگریہ پیشکش مستردکردی گئی جس کے بعدآصف نے خودکشی کا ارادہ کیا ۔ بھارتی حکام کے مطابق آصف نے بتایا کہ اس نے رمضان کے مقدس مہینے کی وجہ سے خود کشی کا ارادہ ترک کیااوراس مقصد سے بارڈرکی طرف چلاگیا کہ اسے بی ایس ایف کا کوئی جوان گولی ماردے گا۔

آصف کوممدوٹ پولیس کے حوالے کرکے اس کی شہریت کی تصدیق کے لیے پاکستانی حکام کومعلومات بھیجی گئی ہیں۔دوسری طرف پاکستانی حکام نے بتایا ہے کہ بھارت کی طرف سے ابھی مکمل تفصیلات فراہم نہیں کی گئیں تاہم جومعلومات ملی ہیں ان کے مطابق اس نوجوان کے خاندان کا سراغ لگانے کی کوشش کی جارہی ہے۔