افغانستان،گذشتہ ماہ مختلف واقعات میں 183افراد ہلاک ، 337 زخمی ہو ئے، ننگر ہار صوبہ سب سے زیادہ متاثر ہوا

پیر جون 19:30

واشنگٹن(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 04 جون2018ء) شہریوں کے تحفظ سے متعلق ایک گروپ سی پی اے جی نے کہا ہے کہ گذشتہ ماہ افغانستان میں مختلف واقعات میں 183افراد ہلاک جب کہ 337افراد زخمی ہو ئے،صوبہ ننگر ہار میں ہلاک و زخمی ہونے والوں کا تناسب زیادہ رہا۔غیر ملکی میڈیا کے مطابق شہریوں کے تحفظ سے متعلق ایک گروپ سی پی اے جی نے کہا ہے کہ مئی کے دوران افغانستان کے 23 صوبوں میں مختلف واقعات میں 183 افراد ہلاک اور 337 زخمی ہوئے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ دوسرے صوبوں کے مقابلے میںگزشتہ مہینے ننگرہار میں ہلاک و زخمی ہونے والوں کا تناسب زیادہ تھا۔سی پی اے جی اگست 2017 سے ہر ماہ کے اختتام پر اپنی رپورٹ جاری کر رہاہے۔یہ گروپ کئی غیر سرکاری تنظیموں، شہریوں کی انجمنوں، اور یواین اے ایم اے پر مشتمل ہے۔

(جاری ہے)

اقوام متحدہ کے ادارے یواین اے ایم اے نے اس سال کی پہلی سہ ماہی کی اپنی رپورٹ میں بتایا تھا کہ اس عرصے کے دوران 763 افراد ہلاک اور 1495 زخمی ہوئے۔

افغان وزارت داخلہ کے عہدے داروں کا خیال ہے کہ دہشتگرد کابل شہر کو اپنی ایک محفوظ پناہ گاہ کے طور پر استعمال کرتے ہیں اور کچھ لوگ انہیں ہتھیار، گولہ باروداور نقل و حرکت کی سہولت بھی فراہم کرتے ہیں۔افغان وزارت داخلہ کے ترجمان نجیب دانش نے وائس ا?ف امریکہ کو بتایا کہ کابل پولیس جلد ہی کالے شیشوں والی گاڑیوں اور پرائیویٹ بکتربند گاڑیوں کیخلاف ایک آپریشن شروع کرنے جا رہی ہے۔