مشرف کی تاحیات نااہلی معطل ،ْسپریم کورٹ کا حکم بہت حد تک آئین سے ماورا ،ْ ایس ایم ظفر

پاکستان کی سوسائٹی میں ایسے حالات پیدا ہو گئے ہیں جن کی وجہ سے عدالت عظمیٰ بھی اپنے اختیارت سے باہر جانے کی مجبوری ہو گئی ہے میڈیا کو قانونی معاملات کو اپنے ہاتھ میں نہیں لینا چاہیے ،ْ یہ معاملات عدالتوں میں ہی طے ہونے چاہیے ،ْ سابق وزیر قانون کا انٹرویو خلائی مخلوق یاکسی ادارے کی پشت پناہی کا بغیر ثبوت فراہم کیے ذکر کرنا ملک کے بدنام کرنے کے علاوہ اور کچھ نہیں ہے

جمعہ جون 21:55

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 08 جون2018ء) پاکستان کے سابق وفاقی وزیر قانون اور آئینی ماہر ایس ایم ظفر نے کہا ہے کہ سابق فوجی صدر پرویز مشرف کو اگلے ماہ ہونے والے انتخابات میں حصہ لینے کی اجازت دینے کا سپریم کورٹ کا حکم بہت حد تک آئین سے ماورا ہے۔جمعہ کو بی بی سی سے بات کرتے ہوئے اٴْنھوں نے کہا کہ ان کے خیال میں سپریم کورٹ اور سوسائٹی کا ماحول بھی تبدیل ہو چکا ہے اور لوگ چاہتے ہیں کہ مختلف مسائل کے حل کیلئے سپریم کورٹ مداخلت کرے اور سپریم کورٹ کی مداخلت کو اب لوگ کسی حد تک تسلیم بھی کر رہے ہیں کہ وہ اس طرح کے احکامات جاری کرے۔

انہوںنے کہاکہ پاکستان کی سوسائٹی میں ایسے حالات پیدا ہو گئے ہیں جن کی وجہ سے عدالت عظمیٰ بھی اپنے اختیارت سے باہر جانے کی مجبوری ہو گئی ہے۔

(جاری ہے)

اٴْنھوں نے کہا کہ سوسائٹی کا ماحول تبدیل کرنے میں میڈیا کا بہت بڑا ہاتھ ہے اور میڈیا کو قانونی معاملات کو اپنے ہاتھ میں نہیں لینا چاہیے اور یہ معاملات عدالتوں میں ہی طے ہونے چاہیے۔جب ان سے یہ سوال کیا گیا کہ سابق فوجی صدر کو انتخابات میں حصہ لینے کی اجازت کے معاملے پر حساس اداروں کا سپریم کورٹ پر کوئی دباو تو نہیں تھا ایس ایم ظفر کا کہنا تھا کہ خلائی مخلوق یاکسی ادارے کی پشت پناہی کا بغیر ثبوت فراہم کیے ذکر کرنا ملک کے بدنام کرنے کے علاوہ اور کچھ نہیں ہے۔

اٴْنھوں نے کہا کہ یہ بھی ہو سکتا ہے کہ سپریم کورٹ نے انسانی حقوق کو سامنے رکھتے ہوئے سابق فوجی صدر کو انتخابات میں حصہ لینے کی اجازت دی ہو لیکن سپریم کورٹ کے اس اقدام سے وہ ماتحت عدالتیں متاثر نہیں ہوں گی جہاں پر پرویز مشرف کے خلاف مختلف مقدمات زیر سماعت ہیں۔سابق فوجی صدر کے خلاف آئین شکنی اور سابق وزیر اعظم بینظیر بھٹو کے قتل کے مقدمے جیسے سنگین مقدمات کے باوجود اٴْنھیں انتخابات میں حصہ لینے کی اجازت کے سوال پر ایس ایم ظفر کا کہنا تھا کہ عدالت کی طرف سے ان مقدمات میں ملزم کی پاکستان میں جائیداد کی ضبطگی کا عمل اس لیے ہوتا ہے تاکہ وہ ملزم کو مجبور کرے کہ وہ اپنے خلاف دائر مقدمات کا سامنا کرنے کیلئے مختلف عدالتوں میں پیش ہوں۔

ایس ایم ظفر جو نگراں وفاقی وزیر قانون علی ظفر کے والد بھی ہیں، کا کہنا تھا کہ اگر مختلف عدالتوں نے ملزم پرویز مشرف کی جائیداد کی قرقی کے احکامات بھی جاری کر رکھے ہیں تو یہ احکامات ملزم کے پیش ہونے کی صورت میں واپس بھی لیے جا سکتے ہیں۔۔پاکستان آنے کی صورت میں سابق فوجی صدر کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ میں شامل کرنے کے بارے میں اٴْنھوں نے کہا کہ عدالتیں بھی ایسا کر سکتی ہیں لیکن یہ اختیار نگران وفاقی حکومت کے پاس بھی یہ اختیار ہے کہ وہ ملزم کا نام ای سی ایل میں شامل کر سکتی ہے۔