ساہیوال ،(ن)لیگی رہنما ضمانت منسوخ ہونے پر عدالت سے بھاگ نکلا

چوہدری حامد حمید پر انتخابات میں کارکنان کو بھڑکانے ‘ملکی اداروں کیخلاف نعرے بازی کروانے کا الزام ہے

منگل ستمبر 15:59

ساہیوال ،(ن)لیگی رہنما ضمانت منسوخ ہونے پر عدالت سے بھاگ نکلا
ساہیوال(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 18 ستمبر2018ء) عام انتخابات میں کارکنوں کو اداروں کے خلاف نعرہ بازی پر اکسانے والے رکن اسمبلی ایک اور سنگین غلطی کر بیٹھے۔مسلم لیگ (ن )کے رہنما چوہدری حامد حمید ضمانت منسوخ ہو جانے پر احاطہ عدالت سے فرار ہو گئے۔تفصیلات کے مطابق 2018 کے انتخابات مسلم لیگ (ن )پر خاصے بھاری رہے تھے۔ان انتخابات میں پہلی مرتبہ مسلم لیگ (ن )کو بدترین شکست کا سامنا کرنا پڑا۔

تاہم (ن )لیگ اس شکست کو اپنی سیاسی غلطی تسلیم کرنے کی بجائے اس کا سارا ملبہ عدلیہ اور اسٹیبلیشمنٹ پر ڈالا دیا۔اس حوالے سے مسلم لیگ (ن )کی قیادت اور رہنما اکثر اداروں کیخلاف ہرزہ سرائی بھی کرتے نظر آتے تھے۔ایسا ہی ایک واقعہ سرگودھا میں پیش آیا تھا۔اس واقعے میں لیگی رہنما اور رکن اسمبلی حامد حمید اور انکے ساتھیوں نے کارکنان کو بھڑکا کر ان کو ملکی اداروں کیخلاف نعرے بازی پر مجبور کیا تھا۔

(جاری ہے)

جس پر بعد میں (ن )لیگی رہنما حامد حمید پر مقدمہ درج کر دیا گیا تاہم لیگی رہنما ذولفقار علی بھٹی نے ضمانت قبل از گرفتاری حاصل کر لی۔اس کیس کی عدالت میں ایڈیشنل سیشن جج کی سماعت کی۔اس سماعت کے دوران ایڈیشنل سیشن جج نے چوہدری حامد حمید سمیت 240 کارکنوں میں سے 34 افراد کی درخواست ضمانت خارج کی،تاہم ایم این اے حامد حمید اور ان کے ساتھی اس ضمانت منسوخی کے بعد احاطہ عدالت سے گرفتار ہو گئے۔یاد رہے کہ اس سے قبل مسلم لیگ (ن )کے ہی ایک رہنما ذولفقار بھٹی اسی قسم کے کیس میں انسداد دہشتگردی کی عدالت سے ضمانت منسوخ ہونے کے بعد فرار ہو گئے تھی