عیدالفطر کی آمد، برائلر گوشت کی قیمت ملکی تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی

عید کی آمد کے ساتھ ہی ناجائز منافع خور سرگرم ،لاہور سمیت ملک کے مختلف شہریوں میں گوشت 520 روپے فی کلو تک فروخت ہونے لگا، ذرائع

Danish Ahmad Ansari دانش احمد انصاری بدھ مئی 22:15

عیدالفطر کی آمد، برائلر گوشت کی قیمت ملکی تاریخ کی بلند ترین سطح پر ..
لاہور(اُردو پوائنٹ، اخبار تاز ہ ترین، 12 مئی 2021) عید کی آمد کے ساتھ ہی ناجائز منافع خور سرگرم ،لاہور سمیت ملک کے مختلف شہریوں میں گوشت 520 روپے فی کلو تک فروخت ہونے لگا۔ تفصیلات کے مطابق حکومت اور انتظامیہ نے برائلر گوشت کی بڑھتی ہوئی قیمتوں کے آگے بند باندھنے کی بجائے آنکھیں بند کر لیںجس سے اس کی اونچی اڑان جاری ہے ۔گزشتہ روز پرچون سطح پر برائلر گوشت کی قیمت مزید 7روپے اضافے سی429روپے،زندہ برائلر مرغی کی قیمت5روپے اضافے سی296روپے فی کلو جبکہ فارمی انڈوں کی قیمت136روپے فی درجن پر مستحکم رہی۔

دوسری جانب اوپن مارکیٹ میں مختلف مقامات پر برائلر گوشت 500سی520روپے فی کلو تک فروخت کیا گیا ۔ٹولنٹن مارکیٹ میں مرغی کا گوشت 460روپے فی کلو میں فروخت کیا جا رہا۔ زندہ مرغی تھوک میں 273اور پرچون میں 281روپے کلو میں فروخت ہونے لگی ۔

(جاری ہے)

دکانداروں نے شکوہ کیا ہے کہ فارم سے مرغی مہنگی مل رہی، مرغی کی قیمت اب تک کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی۔ذرائع کے مطابق کوئٹہ میں فی کلو قیمت میں 40روپے کا اضافہ ہوا۔

فیصل آباد میں مرغی کا گوشت 412روپے فی کلو میں دستیاب ہے، زندہ مرغی کی قیمت 285روپے فی کلو ہو گئی۔فیصل آباد میں مرغی کے گوشت کی فی کلو قیمت 450روپے سے بڑھ کر 470 روپے ہو گئی۔کوئٹہ میں 2روز میں مرغی کے گوشت کی فی کلو قیمت میں 40روپے کا اضافہ ہوا۔پشاور میں زندہ فارمی مرغیوں کی قیمتوں میں دوبارہ اضافہ ہو گیا ہے،شہرمیں زندہ فارمی مرغیاں تاریخ کی بلند ترین سطح کو پہنچ گئی ہے ۔

بازاروں میں فل چکن550سے 700میں فروخت ہونے لگا۔ مرغی فروشوں کا کہنا ہے کہ مرغیوں کی پیداوار کم ہونے اور فیڈ مہنگا ہونے کی وجہ سے زیادہ تر پولڑی فارم مالکان نے مرغیوں کی پیداوار کم کر دی ہے جس سے مرغی اور انڈوں کے قیمتوں میں بے تحاشہ اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔انہوں نے کہا کہ چھوٹے چوزے کا ریٹ 31روپے کی بجائے100روپے تک پہنچ گیا۔مرغی کے گوشت کی قیمتوں میں ہوشربا اضافے کے حوالے سے مسابقتی کمیشن آف پاکستان کی انکوائری رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ 19 پولٹری فیڈ کمپنیاں قیمتوں کے تعین کے حوالے سے مبینہ گٹھ جوڑ میں ملوث رہی ہیں اور ان کی مبینہ کمپٹیشن مخالف سرگرمیاں پولٹری فیڈ کی قیمتوں میں اضافے کا باعث بنی ہیں۔

مسابقتی کمیشن آف پاکستان کے مطابق پولٹری فیڈ برائلر گوشت اور انڈوں کی لاگت کا تقریبا 75 سے 80 فیصد ہے۔ لہذا پولٹری فیڈ کی قیمتوں میں اضافے سے مرغی اور انڈوں کی قیمتوں پر اثر پڑتا ہے۔دسمبر 2018 سے دسمبر 2020 کے درمیان فیڈ ملوں نے آپس میں ملی بھگت کر کے پو لٹری فیڈ کی قیمتوں میں اوسطا 836 روپے فی 50 کلوگرام بیگ یعنی 32 فی صد اضافہ کیا۔