Majeed Lahori - Joke No. 455

مجید لاہوری - لطیفہ نمبر 455

مجید لاہوری ایک دلچسپ انسان اور عظیم شاعر تھے۔ ایک بار وہ مشاعرے میں بیٹھے پڑھنے والے شاعروں پر پھبتیاں کس رہے تھے ایک کہنہ مشق بزرگ شاعر کی باری آ گئی مشاعرے میں”بات کیا کیا رات کیا کیا“ کی زمین پر اشعار پڑھے جا رہے تھے بزرگ شاعر نے پہلا مصرع پڑھا یہ دل ہے یہ جگر ہے یہ کلیجہ مجید لاہوری نے بے ساختہ شعر اس طرح مکمل کر دیا قصائی دے گیا سوغات کیا کیا

مزید لطیفے

گرم یا ٹھنڈا

garam ya thanda

آخر کب تک

akhir kab tak

منگیتر

mangetar

شادی

Shaadi

سیٹھ صاحب

sith sahib

تقریب

Taqreeb

ایک صاحب

Aik sahib

نیا چپڑاسی

Naya Chaprasi

بھکاری

Bhikaari

ہوٹل

Hotel

شوہر

shohar

تیز گام

tezgam

Your Thoughts and Comments