شام، حمص میں الشعیرات پر میزائل حملہ، پینٹاگون کی وضاحت

منگل اپریل 18:59

دمشق/واشنگٹن (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 17 اپریل2018ء) شام میں سرکاری ٹیلی وژن نے منگل کو علی الصبح ایک اعلان میں بتایا ہے کہ فضائی دفاعی نظام نے حمص صوبے کی فضائوں میں آنے والے میزائلوں کو مار گرایا۔ ادھر امریکی وزارت دفاع پینٹاگون نے حمص میں کسی بھی امریکی عسکری کارروائی کی تردید کی ہے۔سرکاری ٹی وی اور بشار حکومت کے دیگر ذرائع ابلاغ کے مطابق مذکورہ میزائلوں کے ذریعے الشعیرات کے فضائی اڈے کو نشانہ بنانے کی کوشش کی گئی۔

تاہم یہ نہیں بتایا گیا کہ یہ حملہ کس نے کیا۔ یہ وہ ہی اڈہ ہے جس پر گزشتہ برس امریکا نے 49 کے قریب میزائل داغے تھے۔ یہ امریکی کارروائی اِدلب کے قصبے خان شیخون میں کیمیائی حملے کے جواب میں سامنے آئی تھی۔شامی حکومت کے مقرب میڈیا کے مطابق حالیہ کارروائی میں 6 میزائل حمص کے نواح میں الشعیرات ہوائی اڈے پر گرے جب کہ 3 دیگر میزائل نے دمشق کے نواح میں الضمیر ہوائی اڈے کو نشانہ بنایا۔

(جاری ہے)

دوسری جانب شام میں انسانی حقوق کے سب سے بڑے نگراں گروپ المرصد کے ڈائریکٹر رامی عبدالرحمن نے پیر کی شب العربیہ نیوز چینل کے ساتھ ٹیلیفونک رابطے میں بتایا کہ حمص کے مشرقی نواح اور القلمون کے مشرقی نواح میں عینی شاہدین نے زور دار دھماکوں کی آوازیں سنیں۔شام میں ایرانی فورسز ہتھیاروں کی وصولی اور ان کی ملک کے دیگر علاقوں میں منتقلی کے لیے الشعیرات کے ہوائی اڈے پر انحصار کرتے ہیں۔امریکا ، فرانس اور برطانیہ نے ہفتے کو علی الصبح شام میں دمشق اور اس کے اطراف کے دیگر علاقوں میں کیمیائی ہتھیاروں کی تیاری کے مراکز حملہ کر کے 100 سے زیادہ میزائل داغے تھے۔ یہ کارروائی مشرقی غوطہ کے شہر دوما میں شہریوں پر کیمیائی ہتھیاروں کے ذریعے حملے کے بعد عمل میں لائی گئی۔

متعلقہ عنوان :