یو اے ای کے سرمایہ کار پاکستان میں تین سو ارب روپے تک سرمایہ کاری کرنے میںدلچسپی رکھتے ہیں

سبحانی گروپ آف کمپنی کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر حامد سبحانی کی پریس کانفرنس

جمعرات اپریل 23:02

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 19 اپریل2018ء) سبحانی گروپ آف کمپنی کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر حامد سبحانی نے کہا ہے کہ متحدہ عرب امارات کے سرمایہ کار پاکستان میں تین سو ارب روپے تک سرمایہ کاری کرنے میںدلچسپی رکھتے ہیں،چھ بڑے مختلف پراجیکٹس جن میں انرجی ،رئیل اسٹیٹ، فشریز وزراعت، شعبہ صحت ،ہوٹلز، انٹرٹینمنٹ اور تعلیم سے منسلک اداروںمیں سرمایہ کاری کریںگے۔

جمعرات کے روز نیشنل پریس کلب اسلام آبادمیں پریس کانفرنس کرتے ہوئے سبحانی گروپ آف کمپنی کے ڈائریکٹر حامد سبحانی نے کہا کہ بی ایم ایس انٹرنیشنل ، یواے ای کا ہمارے ساتھ تحریری معاہدہ ہوا ہے، معاہدے کے تحت یو اے ای پاکستان کے مختلف سیکٹروں میں سرمایہ کاری کرے گی۔ان کاکہناتھاکہ,26 ,27اور 28اپریل کو پاک چائنا فرینڈشپ سنٹرمیں پراپرٹی شوکا انعقاد کررہے ہیں۔

(جاری ہے)

جس میںصف اول کے کنسٹرکشن کرنے والے بلڈر ز اپنے سٹال لگائیںگے۔ 2018کو شیخ زید بن سلطان البنان کی صد سالہ یوم پیدائش پر’’ ائیرآف زید‘‘ منارہے ہیں۔ ان کا مزید کہناتھاکہ ہم بہت نیک نیتی سے یو اے ای کے سرمایہ کاروں کو پاکستان لا رہے ہیں۔ چیئرمین فیڈریشن آف رئیل اسٹیٹ مسرت اعجازنے پریس کانفرنس میں کہا کہ ملک اور کمیونٹی کے فائدے کے لئے کام کررہے ہیں۔

ان کاکہناتھا کہ مہنگائی کا سرکل رئیل اسٹیٹ اور اداروں سے شروع ہوتاہے۔انہوں نے مثال پیش کرتے ہوئے بتایا کہ سی ڈی اے نے پورے اسلام آبادمیں تین سیکٹروں پر توجہ دی ہیںجس کی وجہ سے پورے اسلام آبادمیں پلاٹو ں کی قیمتیں آسمان سے بات کررہی ہیں، مہنگائی سے عام آدمی کے لئے گھرکا چھت خرید نا مشکل ہوگیا ۔ 10گز کا پلاٹ ایک ارب تک پہنچادیئے، 1980میں سی ڈی اے اور مختلف جوڑے ہوئے اداروں کی کارگردگی بہتر تھی لیکن اس کے بعد مہنگائی کا راج قائم ہوا۔ ان کا کہنا تھا کہ ملک میں جب بھی رئیل سٹیٹ کے حوالے سے قانون سازی ہوتی ہیںتورئیل سٹیٹ کے نمائندگان کو اعتماد میںلینا چاہیئے کیونکہ رئیل سٹیٹ جو کہ معیشت میں ریڑھ کی ہڈی کی طرح مثال رکھتی ہے اس کو فروغ مل سکے۔