جس خاندان سے ہوں وہاں بیٹی کو معیوب نہیں سمجھا جاتا، ثانیہ مرزا

اپنے ہونے والے بچے کا نام مرزا ملک رکھنے کے فیصلے کے پیچھے بھی یہی سوچ تھی،شعیب ایک مضبوط انسان ہیں جنہوں نے اپنے نام کے ساتھ اپنی بیوی کا نام بھی لگانے کا فیصلہ کیا،بھارتی ٹینس اسٹار ثانیہ مرزا

منگل مئی 21:02

جس خاندان سے ہوں وہاں بیٹی کو معیوب نہیں سمجھا جاتا، ثانیہ مرزا
نئی دہلی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 مئی2018ء) بھارتی ٹینس اسٹار ثانیہ مرزانے کہا ہے کہ ہمارے معاشرے میں اگر لڑکا پیدا ہو تو اسے خاندان کا چراغ کہا جاتا ہے، لیکن وہ جس خاندان سے ہیں وہاں بیٹی کو معیوب نہیں سمجھا جاتا۔ ٹائمز آف انڈیا کی ایک رپورٹ کے مطابق اس فیصلے کی وضاحت کرتے ہوئے ثانیہ نے بتایا کہ بدقسمتی سے ہمارے معاشرے میں سمجھا جاتا ہے کہ ایک لڑکا ہی خاندان کو آگے بڑھا سکتا ہے اور وہ خاندان کا چراغ ہوگا۔

انہوں نے مزید بتایا، ''میرا تعلق ایک ایسے خاندان سے ہے، جہاں 2 بیٹیاں تھیں، لیکن ہمیں کبھی بھائی کی ضرورت محسوس نہیں ہوئی اور نہ ہی کبھی ہم سے مختلف برتا کیا گیا۔ثانیہ مرزا کے بقول 'اپنے ہونے والے بچے کا نام 'مرزا ملک' رکھنے کے فیصلے کے پیچھے بھی یہی سوچ تھی، میرے شوہر ایک ایسے انسان ہیں جو خود بھی ایسا ہی سوچتے ہیں اور کوئی مضبوط انسان ہی یہ کہہ سکتا ہے کہ وہ اپنے نام کے ساتھ اپنی بیوی کا نام بھی لگائے گا۔

(جاری ہے)

انہوں نے بتایا کہ ہم اپنے بچے کا نام مرزا ملک ہی رکھنا چاہتے تھے اور یہ سوچ اس وقت بھی ہمارے ذہن میں تھی جب ہم نے والدین بننے کے حوالے سے منصوبہ بندی بھی نہیں کی تھی، ہم نے ہمیشہ اس بارے میں بات کی ہے کہ چاہے لڑکا ہو یا لڑکی، ہمارے بچے کے نام کا ایک حصہ مرزا ملک ہوگا اور ہمیں اپنے ہونے والے بچے کے نام کے ساتھ اپنے نام لگانے پر فخر ہے۔اپنی زندگی پر فلم بننے سے متعلق سوال کے جواب میں ثانیہ نے کہا کہ اس حوالے سے کئی باتیں کی جا رہی ہیں، لیکن اس فلم سے متعلق ابھی باقاعدہ طور پر کوئی حتمی فیصلہ نہیں ہوا۔

متعلقہ عنوان :