سیدعلی گیلانی کی طرف سے مولانا محمد یوسف شاہ کو زبردست خراج عقیدت پیش

مولانا محمد یوسف نے اپنی پوری زندگی دین کی خدمت اور کشمیری عوام کی حق خودارادیت کی تحریک کے لیے وقف کررکھی تھی

پیر جون 12:40

سرینگر(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 04 جون2018ء) مقبوضہ کشمیرمیں کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سیدعلی گیلانی نے مولانا محمد یوسف شاہ مرحوم کوانکی 51ویں برسی کے موقع پر زبردست خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے کہا کہ انہوںنے اپنی پوری زندگی دین کی خدمت اور کشمیری عوام کی حق خودارادیت کی تحریک کے لیے وقف کررکھی تھی۔کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق سیدعلی گیلانی نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہاکہ مولانا یوسف شاہ نے اپنے قول و فعل سے مسئلہ کشمیر کی حقیقت کو روشناس کرنے کے لیے جامع مسجد سرینگر کے محراب اور ریاست کے سیاسی اسٹیج سے صدائے حق کو بلند کرنے میں مصلحت پسندی سے کبھی کام نہیں لیا۔

انہوںنے مولانا کے دینی فہم اور سیاسی بصیرت کو قابل تحسین اور صد آفرین قرار دیتے ہوئے کہا کہ انہوں نے اُس وقت بھارت کے آلہٴ کار شیخ محمد عبداللہ کی رفاقت کو ترک کرتے ہوئے اپنے وطن عزیز سے ہجرت کرنے کو ترجیح دی اور مرتے دم تک اپنے مقدس مشن سے ہمیشہ جڑے رہے۔

(جاری ہے)

سیدعلی گیلانی نے مولانا یوسف شاہ کی مستحسن علمی کاوشوں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے قرآن شریف کا کشمیری زبان میںترجمہ کرکے اپنے لیے توشہٴ آخرت اور ایک قابل قدر فریضہ انجام دیاہے۔

انہوںنے مولانا کی 51ویں برسی پر میر واعظ خاندان کے ساتھ اظہار یکجہتی کرتے ہوئے اُمید ظاہر کی کہ یہ خاندان دینی علوم کی ترویج وتبلیغ کے ساتھ ساتھ مسئلہ کشمیر کے منصفانہ حل کے لیے اپنی خدمات ان شاء اللہ آئندہ بھی انجام دیتا رہے گا۔حریت رہنماء نے کہاکہ مولانا محمد یوسف شاہ مرحوم کوخراج عقیدت پیش کرنے کا یہی بہترین طریقہ ہے۔انہوںنے قابض انتظامیہ اوربھارتی فورسز کی طرف سے مولانا مرحوم کی برسی منانے سے روکنے کیلئے غیر اعلانیہ کرفیو اور پابندیاںعائدکرنے کی فسطائیت پر مبنی کارروائیوں کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ مقبوضہ علاقے میںجملہ دینی اور سیاسی سرگرمیوں پر پابندیاں عائد کرنا کٹھ پتلی انتظامیہ کی ناکامی اور بدترین شکست کا مظہر ہے۔