کلثوم نواز کی حالت بدستور تشویشناک، نواز شریف اور مریم نے وطن واپسی موخر کردی

نواز شریف اور مریم نواز کی وطن واپسی کلثوم نواز کی بہتری سے مشروط ،ْذرائع کلثوم نواز کی حالت بدستور تشویشناک ،ْڈاکٹرز کا لائف سپورٹ مشین سے نہ ہٹانیکا فیصلہ نواز شریف، حسین اور مریم نواز نے بھی ڈاکٹرز سے 2 گھنٹے طویل ملاقات ،ْڈاکٹرز کی بریفنگ

پیر جون 12:40

لندن(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 18 جون2018ء) بیگم کلثوم نواز کی تشویشناک حالت کے باعث سابق وزیراعظم نواز شریف اور ان کی صاحبزادی مریم نواز نے وطن واپسی مؤخر کر دی۔ذرائع کے مطابق کلثوم نواز کی حالت بدستور تشویشناک ہے جس کے باعث ڈاکٹرز نے انہیں لائف سپورٹ مشین سے نہ ہٹانیکا فیصلہ کیا ہے۔ذرائع کے مطابق نواز شریف،، حسین اور مریم نواز نے بھی ڈاکٹرز سے 2 گھنٹے طویل ملاقات کی جس میں ڈاکٹرز نے شریف فیملی کو بتایا کہ کلثوم نواز کی طبیعتت کو مانیٹر کیا جا رہا ہے تاہم حالت میں بہتری کے حوالے سے کوئی ٹائم فریم نہیں دیا جا سکتا۔

ڈاکٹرز نے نواز شریف کو اہلیہ کے ساتھ زیادہ وقت گزارنے کا مشورہ دیا ہے۔ذرائع کے مطابق نواز شریف اور مریم کو 19 جون کو عدالت میں پیش ہونا تھا اور دونوں نے پاکستان واپسی کے ٹکٹ بھی کروا رکھے تھے لیکن ڈاکٹرز کے مشورے کے بعد نواز شریف اور مریم نواز نے فی الحال وطن واپسی مؤخر کر دی ہے۔

(جاری ہے)

ذرائع کے مطابق نواز شریف اور مریم نواز کی وطن واپسی بیگم کلثوم نواز کی صحت سے مشروط ہے۔ذرائع کے مطابق نواز شریف اور مریم نواز 19 جون کو احتساب عدالت میں پیش نہیں ہوں گے اور دونوں کے وکلاء حاضری سے استثنیٰ کی درخواست دیں گے۔ذرائع کے مطابق کلثوم نواز کی میڈیکل رپورٹ اور ڈاکٹر کا خط بھی حاضری سے استثنیٰ کی درخواست کے ساتھ احتساب عدالت میں جمع کرایا جائے گا۔