ْسینیٹ دفاع کمیٹی کا سابق آئی ایس آئی چیف کی بھارتی ہم منصب کے ہمراہ مشترکہ کتاب کا نوٹس

وزارت دفاع سے کتاب کی اشاعت سے ملکی دفاع اور قومی سلامتی پر ہونے والے اثرات سے متعلق26جون کو بریفنگ طلب امریکا میں تعینات ہونے والے نئے پاکستانی سفیر علی جہانگیر صدیقی کی تعیناتی پر بھی وزارت خارجہ سے بریفنگ طلب

جمعہ جون 15:39

ْسینیٹ دفاع کمیٹی کا سابق آئی ایس آئی چیف کی بھارتی ہم منصب کے ہمراہ ..
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 جون2018ء) سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے دفاع نے سابق آئی ایس آئی چیف لیفٹیننٹ جنرل (ر) اسد درانی کی بھارتی ہم منصب کے ہمراہ مشترکہ کتاب کا نوٹس لیتے ہوئے وزارت دفاع سے کتاب کی اشاعت سے ملکی دفاع اور قومی سلامتی پر ہونے والے اثرات سے متعلق26جون بروز منگل کو بریفنگ طلب کر لی جبکہ کمیٹی نے امریکا میں تعینات ہونے والے نئے پاکستانی سفیر علی جہانگیر صدیقی کی تعیناتی پر وزارت خارجہ سے بھی بریفنگ طلب کر لی۔

تفصیلات کے مطابق سینیٹ سیکریٹریٹ کی جانب سے جاری ہونے والے سینیٹ قائمہ کمیٹی برائے دفاع ایجنڈے کے مطابق قائمہ کمیٹی نے سابق آئی ایس آئی لیفٹیننٹ جنرل (ر) اسد درانی کی بھارتی ہم منصب اے ایس دلت کے ہمراہ مشترکہ کتاب "دی سپائی کرانیکلز"کا نوٹس لیتے ہوئے وزارت دفاع سے کتاب کی اشاعت سے ملکی دفاع اور قومی سلامتی پر ہونے والے اثرات سے متعلق26جون بروز منگل کو بریفنگ طلب کر لی ۔

(جاری ہے)

واضح رہے کہ سابق آئی ایس آئی چیف کی کتاب پر مختلف حلقوں کی جانب سے شدید تنقید کی گئی جس پر لیفٹیننٹ جنرل (ر) اسد درانی کوپاک فوج کے جنرل ہیڈ کوارٹرز( جی ایچ کیو)) طلب کر کے ان سے جواب طلب کیا گیا تھا اور ان کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کی سفارش کی گئی تھی۔ قائمہ کمیٹی برائے دفاع نے امریکا میں تعینات ہونے والے نئے پاکستانی سفیر علی جہانگیر صدیقی کی تعیناتی پر بھی خدشات کا اظہار کرتے ہوئے وزارت خارجہ سے بھی26جون کو تفصیلی جواب طلب کر لیا ہے ۔ واضح رہے کہ اس سے قبل بھی علی جہانگیر صدیقی کی تعیناتی پرمختلف حلقوں کی جانب سے تحفظات کا اظہار کیا گیا تھا اور ان کے خلاف نیب میں مقدمات بھی چل رہے ہیں۔