پی ٹی آئی نے حکومتی اداروں میں عدم سیاسی مداخلت کی روایت ڈالی ہے، صحت، تعلیم اور پولیس میں عدم سیاسی مداخلت کے حوصلہ افزا نتائج برآمد ہوئے ہیں، حقیقی تبدیلی اس وقت آئے گی جب نچلی سطح پر اختیارات کو منتقل کرکے عوام کو با اختیار بنایا جائے گا ، ضلعی زکوةکمیٹیوں کو فعال کیا جائے اور زکوة اور بیت المال کی تقسیم کے نظام میں شفافیت کو یقینی بنایا جائے،، ہم نے ماضی کی کرپشن کو بے نقاب کرنا ہے

وزیر اعظم عمران خان کا پنجاب کی صوبائی کابینہ کے اجلاس سے خطاب

اتوار ستمبر 20:31

لاہور ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 23 ستمبر2018ء) وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت پنجاب کی صوبائی کابینہ کا اجلاس ہفتہ کو لاہور میں منعقد ہوا۔ اس موقع پر اجلاس سے خطاب کرتے ہو ئے وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف نے خیبر پختوانخواہ میں عوام کی بہتری پر توجہ دی جس کا نتیجہ ہے کہ عوام نے پی ٹی آئی کو دوبارہ بھاری اکثریت میں منتخب کرکے اپنے اعتماد کا اظہار کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی نے حکومتی اداروں میں عدم سیاسی مداخلت کی روایت ڈالی ہے اور صحت، تعلیم اور پولیس میں عدم سیاسی مداخلت کے حوصلہ افزا نتائج برآمد ہوئے ہیں۔ وزیر اعظم نے کہا کہ آج عوام حکومت کی کاکردگی کو بغور دیکھ رہے ہیں اور لوگوں کو آپ سے بے شمار توقعات وابستہ ہیں۔

(جاری ہے)

وزیراعظم نے کہا کہ آج تک جتنی عمارتوں میں آگ لگی ہے اس کی تحقیقات کے لیے جے آئی ٹی بنائی جائے تاکہ حقائق سامنے آئیں۔

انہوں نے وزراء کو ہدایت کی کہ وزرا ہفتے میں سات دن کام کریں ان کے لیے کوئی چھٹی نہیں۔ انہوں نے کہا کہ مسائل کے حل کے لیے آؤٹ آف باکس حل تجویز کریں، عوام کوبتائیں کہ حکومتی ادارے کس طرح قرض میں ڈوبے پڑے ہیں، ہم نے ماضی کی کرپشن کو بے نقاب کرنا ہے، آپ عوام کو بتائیں کہ کس طرح غریب عوام کے پیسے پر حکمران شاہانہ زندگیاں گزارتے تھے۔

انہوں نے تمام بڑے بڑے پراجیکٹس کے آڈٹ کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ گذشتہ دس سالوں کی ایک ایک چیز عوام کے سامنے لائی جائے۔ انہوں نے کہا کہ ضلعی زکوةکمیٹیوں کو فعال کیا جائے اور زکوة اور بیت المال کی تقسیم کے نظام میں شفافیت کو یقینی بنایا جائے۔ وزیراعظم نے وزیر اعلی آفس میں عوام کی سہولت کے لیے شکایتی سیل قائم کرنے کی ہدایت کی تاکہ عوام اور عوامی نمائندوں کی شکایات کا ازالہ کیا جاسکے۔

انہوں نے ہدایت کی کہ آئندہ 48 گھنٹوں میں لوکل باڈیز نظام کو حتمی شکل دی جائے گی ، حقیقی تبدیلی اس وقت آئے گی جب نچلی سطح پر اختیارات کو منتقل کرکے عوام کو بااختیار بنایا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ لوگوں کو آپ سے پرانی سیاسی روایات کی توقع بالکل نہیں ہے اور ہم نے لوگوں کو نئی سوچ دی ہے، ہم نے انسانوں کی ترقی پر توجہ دی، سارے وزیروں کو کہتا ہوں کہ اپنے محکموں کا جائزہ لیں، قوم کو بتائیں کہ آپ کے محکمے کے کیا حالات ہیں۔

انہوں نے کہا کہ عوام کو بتایا جائے کہ ماضی کی حکومتوں نے کتنا قرضہ لیا اور حاصل شدہ قرض کے سود کی ادائیگی کے لیے مزید قرضہ لینا پڑتا ہے۔ انہوں نے ہدایت کی کہ تمام شعبوں کے حالات عوام کے سامنے رکھے جائیں۔ اس موقع پر وزیر اعظم کو پی ٹی آئی حکومت کے پہلے سو دن کے ایجنڈے پر اب تک ہونے والی پیش رفت پر بریفننگ بھی دی گئیاور وزیر اعظم کو بتایا گیا کہ آئندہ دو ماہ میں پنجاب کے 36 اضلاع میں صحت انصاف کارڈ کی فراہمی کا عمل مکمل کر لیا جائے گا۔

اس کارڈ کی بدولت ہر خاندان کو 3 لاکھ 60 ہزار روپے کی میڈیکل کی سہولت ملے گی، اس پروگرام سے کل 60 لاکھ خاندان مستفید ہوں گے۔ مزید بتایا گیا کہ سات ہزار ڈاکٹرز اور 2500 نرسوں کی بھرتی اور چالیس ہسپتالوں میں سہولتوں کی بہتری کا عمل مکمل کر لیا گیا ہے جس سے صوبے میں صحت کی سہولتوں میں اضافہ میں مدد ملے گی۔ مزید برآں زراعت، آبی وسائل، مزدوروں اور ورکرز کی فلاح و بہبود ، سیاحت کے فروغ اور تعلیم کے شعبے میں بہتری کے لئے بھی اقدامات کئے جا رہے ہیں۔