واشنگٹن نے قطر میں طالبان کیساتھ مذاکرات دوبارہ بحال کردیئے

امریکہ دوحہ میں مذاکرات میں دوبارہ شامل ہوگیا ہے ، مذاکرات میں تشدد میں کمی پر توجہ دی جائے گی جو کہ بین الافغان مذاکرات اور فائر بندی کی طرف جائیں گے

ہفتہ دسمبر 23:40

واشنگٹن نے قطر میں طالبان کیساتھ مذاکرات دوبارہ بحال کردیئے
دوحہ(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 07 دسمبر2019ء) واشنگٹن نے ہفتہ کے روز قطر میں طالبان کیساتھ مذاکرات دوبارہ بحال کردیئے ہیں ، یہ بات ایک امریکی ذریعہ نے کہی جیسا کہ تین ماہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے سفارتی کوششوں کو روک دیا گیا تھا جس کے نتیجے میں امریکہ کی طویل ترین جنگ کا خاتمہ ہو سکتا ہے۔افغانستان میں تقریباً دو دہائیوں پر محیط جنگ کے خاتمے کی کوششوں پر بریف کرتے ہوئے ذریعہ کا کہنا تھا کہ امریکہ دوحہ میں مذاکرات میں دوبارہ شامل ہوگیا ہے ، مذاکرات میں تشدد میں کمی پر توجہ دی جائے گی جو کہ بین الافغان مذاکرات اور فائر بندی کی طرف جائیں گے ۔

ستمبر میں امریکہ اور طالبان بظاہر معاہدے پر دستخط کے قریب پہنچ چکے تھے جس کے تحت واشنگٹن کی جانب سے سکیورٹی ضمانتوں کے بدلے ہزاروں کی تعداد میں فوجی انخلاء دیکھا جارہا تھا ، یہ بھی توقع کی جارہی تھی کہ طالبان اور کابل میں حکومت کے درمیان براہ راست مذاکرات کی راہ ہموار ہو جائے گی اور آخر کار 18سال سے زائد عرصے کی جنگ کے بعد ممکنہ امن معاہدہ طے پا جائیگا ، تاہم اسی ماہ ٹرمپ نے فوری طور پر ایک سالہ پرانی کوششوں کو مردہ قرار دیتے ہوئے کیمپ ڈیوڈ میں اپنی رہائش گاہ پر طالبان کیساتھ خفیہ مذاکرات کی دعوت سے دستبرداری اختیار کرلی تھی جب ایک امریکی فوجی اہلکار ہلاک ہو گیا تھا۔

(جاری ہے)

گزشتہ ہفتے افغانستان میں ایک امریکی فوجی اڈے کے اچانک دورے کے دوران ٹرمپ نے کہا کہ طالبان معاہدہ چاہتے ہیں۔