بھنڈی کی اوسط پیداوار 120من فی ایکڑ تک پہنچ گئی،کاشتکاروں کو پہلی فصل وسط فروری سے مارچ کے آخر تک کاشت کرنے کی ہدایت

بدھ جنوری 13:33

بھنڈی کی اوسط پیداوار 120من فی ایکڑ تک پہنچ گئی،کاشتکاروں کو پہلی فصل ..
فیصل آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 22 جنوری2020ء) محکمہ زراعت کے ترجمان نے بتایا کہ پنجاب کے مختلف اضلاع میں بھنڈی کی اوسط پیداوار 120من فی ایکڑ تک پہنچ گئی ہے جبکہ گزشتہ سال 13ہزار ایکڑ سے زائد رقبہ پر بھنڈی کی کاشت سے 59 ہزار ٹن پیداوار حاصل ہوئی ۔ محکمہ کے ترجمان نے اے پی پی کو بتا یا کہ بھنڈی موسم گرما کی ہر دلعزیز سبزی ہے جس کی کاشت کیلئے گرم مرطوب آب وہوا کی ضرورت ہوتی ہے تاہم یہ فصل کہرکے اثرات کو برداشت نہیں کرسکتی ۔

انہوںنے بتایاکہ بھنڈی کی فصل سال میں 2مرتبہ کاشت کی جاتی ہے لہٰذا کاشتکاروں کو چاہیے کہ وہ پہلی فصل کی کاشت وسط فروری سے مارچ کے آخر تک مکمل کرلیں جبکہ دوسری بار یہ فصل جون اور جولائی میں مکمل کی جاسکتی ہے۔ انہوںنے بتایاکہ فروری و مارچ میں کاشتہ فصل اگست و ستمبر میں پھل دیتی ہے جبکہ جون و جولائی میں کاشتہ فصل اکتوبر نومبر تک پیداوار دینے کے قابل ہو جاتی ہے۔

(جاری ہے)

انہوںنے کہاکہ بھنڈی کی منظور شدہ قسم سبزی پری ہے جس کی بوائی کیلئے اچھی اگائو والا 10 سے 12 کلوگرام بیج فی ایکڑ استعمال کیاجاسکتاہے تاہم بیج کی فصل کا شت کرنے کیلئے بھنڈی کا 6کلوگرام بیج فی ایکڑ ہی کافی ہے۔ انہوں نے بتایاکہ بھنڈی کی فصل 20 سے 30 ڈگری سینٹی گریڈ درجہ حرارت پر بہترین اگائو اور بڑھوتری فراہم کرتی ہے ۔ انہوںنے کہاکہ بھنڈی توری کو ہر قسم کی زمین میں کاشت کیا جاسکتا ہے البتہ زرخیز میرا اور پانی کے بہتر نکاس والی زمین جسکی تیزابی خاصیت6 سے 6.8 ہو بہترین پیداوار کیلئے موزوں ہے۔

متعلقہ عنوان :