Live Updates

جی 20 6 ماہ کی ڈی ایس ایس آئی: ایف پی سی سی آئی نے کورونہ کے بعد کے معاشی بحران سے نمٹنے کے لئے طویل مدتی قرض سے نجات کا مطالبہ

میاں انجم نثار کی وزیر اعظم کی غریب ممالک کے قرضے معاف کرنے کی اپیل کی حمایت

جمعہ اکتوبر 21:15

جی 20 6 ماہ کی ڈی ایس ایس آئی: ایف پی سی سی آئی نے کورونہ کے بعد کے معاشی ..
کراچی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 23 اکتوبر2020ء) فیڈریشن آف پاکستان چیمبر ز آف کامرس اینڈ انڈسٹر ی کے صدر میاں انجم نثا ر نے جی 20 کے ترقی پذیر ممالک کے لئے قرض معطلی کے اقدام میں توسیع کا خیرمقدم کرتے ہو ئے طویل المیعاد قرضوں سے نجات یا ان کے مستقل طور پر خاتمے کا مطالبہ کیا ہے تاکہ کرونا وائرس کے بعد کے معاشی بحران سے نمٹا جاسکے۔

ایف پی سی سی آئی کے صدر میاں انجم نثار نے کہا کہ اگرچہ عالمی معیشت نے کاروبار کو دوبارہ کھولنے کے ساتھ بتدریج بحالی کا آغاز کیا ہے، لیکن معیشت کی بحالی آسانی سے نہیں ہوسکی ہے، کیونکہ بہت سے غریب ممالک تاحال زندگی کی بچانے والی عوامی خدمات کے بجائے قرضوں کی ادائیگی پر زیادہ خرچ کررہے ہیں۔انہوں نے وزیر اعظم عمران خان کے بین الاقوامی برادری سے پاکستان سمیت دیگر ترقی پذیر ممالک کے قرضوں کو معاف کرنے کے مطالبے کی بھی حمایت کی، کیونکہ کوروناوائرس نے ترقی پذیر ممالک کی معیشتوں کو بکھیر کر رکھ دیا ہے۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ عالمی برادری کو پاکستان جیسے ممالک کے لئے کسی نہ کسی طرح سے قرضوں کی ادائیگی کے بارے میں سوچنا چاہئے، کیونکہ اس کی آمدنی کا سب سے بڑا حصہ قرضے کی خدمت میں خرچ کیا جارہا ہے، جس کی وجہ سے وہ بہت ہی کمزور ہے۔انہوں نے کہا کہ مرکزی بینک کے زرمبادلہ کے ذخائر میں گزشتہ ایک ماہ کے دوران ایک ارب ڈالر سے زائد کی کمی واقع ہوئی ہے جس کی بنیادی وجہ بیرونی قرضوں کی خدمت ہے۔

ایف پی سی سی آئی نے وزیر اعظم کے قرضوں کی ادائیگیوں کی مکمل طور پر منسوخی کے مطالبے کا خیرمقدم کیا، جنہوں نے گذشتہ ماہ اقوام متحدہ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ غریب ممالک کو کورونا وائرس کا سب سے زیادہ نقصان اٹھانا پڑا ہے، لہذا ان ممالک کو جی 20 کے ذریعہ قرضوں سے نجات دلانی چاہئے۔انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان نے سب سے پہلے اس مسئلے کو اجاگر کیا جب انہوں نے قرض معافی کا مطالبہ کیا۔

ہم حکومت کی مکمل حمایت کرتے ہیں جو پہلے ہی دو طرفہ قرض دہندگان تک پہنچ چکی ہے تاکہ یہ دیکھ سکیں کہ آیا اس سے کچھ راحت مل سکتی ہے، کیونکہ ملک اپنے ٹیکس کی ایک بڑی رقم غیر ملکی قرض دہندگان کو ادا کرتا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ پچھلے سال پاکستان نے قرض دہندگان کو 11.6 بلین ڈالر کی ادائیگی کی تھی جو اس وقت اس کے ذخائر میں اتنا ہی ہے جتنا اس کے مرکزی بینک کے پاس ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہ بہت خوش آئند ہے کہ دونوں ممالک کے ساتھ ساتھ اجتماعی طور پر سود کی ادائیگیوں پر موخر کرنے کا مطالبہ کیا ہے، کیونکہ ان کا زیادہ تر قرض ایسے قرضوں پر مشتمل ہے جو قرضوں کے چکر میں پھنس کر پچھلے قرضوں کی ادائیگی کے لئے لیا گیا ہے۔ایف پی سی سی آئی کے صدر میاں انجم نثار نے کہا کہ غیر ملکی قرضوں کی طے شدہ ادائیگی کے سبب ستمبر 2020 سے ملک کے ذخائر میں کمی آرہی ہے۔

اگرچہ پچھلے چند ہفتوں کے دوران مرکزی بینک کو کثیرالجہتی اور دوطرفہ ایجنسیوں کی جانب سے کچھ آمدنی بھی موصول ہوئی تاہم آنے والی رقو م آدائییگیوں سے کم تھی جس کی وجہ سے زرمبادلہ کے ذخائر میں زبردست کمی واقع ہوئی۔اسٹیٹ بینک کے اعدادوشمار کا حوالہ دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مستقل بیرونی قرضوں کی ادائیگی کی وجہ سے اسٹیٹ بینک ا ٓف پاکستان کے زرمبادلہ کے ذخائر $ 12 بلین سے نیچے آچکے ہیں، کیونکہ اس کے ذخائر9اکتو بر کو11.79 بلین ڈالرتھے جبکہ 11 ستمبر 2020 کو 12.82 بلین ڈالر پر ہے یہ ظاہر کرتا ہے کہ ایک ہی مہینے میں 1 بلین ڈالر سے زیادہ کی کمی آئی ہے ۔

18 ستمبر کو ختم ہونے والے ہفتے کے دوران، قرضوں کی ادائیگیوں کی وجہ سے بھی اسٹیٹ بینک کے ذخائر 119 ملین ڈالر کم ہو کر 12.70 بلین ڈالر رہ گئی ۔ 25 ستمبر 2020 کو ختم ہونے والے ہفتہ میں اسٹیٹ بینک کے ذخائر میں 342 ملین ڈالر کی کمی سے 12.36 بلین ڈالر ہوگئی۔ اس کمی کو حکومت کی جانب سے بیرونی قرضوں کی ادائیگی بھی قرار دیا گیا یہ رقم 311 ملین ڈالر ہے۔ 9 اکتوبر کو ختم ہونے والے آخری ہفتے کے دوران، اسٹیٹ بینک نے بیرونی قرضوں کی $ 507 ملین ادائیگی کی، جس سے اسٹیٹ بینک کے ذخائر میں 356 ملین ڈالر کی کمی واقع ہوئی ہے اور یہ 11.79 ارب ڈالر رہ گئی ہے۔

انہوں نے عالمی برادری سے کہا کہ وہ پاکستان جیسے ممالک کے لئے قرضوں کی مکمل فراہمی کے بارے میں سوچیں جو انھیں کورونا وائرس کے بعد کے نقصانات سے نمٹنے میں مدد فراہم کرے گا۔انہوں نے کہا کہ پاکستان میں مالی گنجا ئش نہیں اور صحت کا مناسب نظام بھی موجود نہیں ہے۔ انہوں نے کہا لہذا جی 20 ممالک جو انتہائی مناسب جواب دے سکتے ہیں، وہ اس وقت عارضی ریلیف کی بجائے قرض معاف کر دیں۔

جی 20 ممالک کے اصولی اور سود کی ادائیگیوں پر عبوری قرض سے متعلق امداد کے اعلان کا کوئی فائدہ نہیں ہے کیونکہ قرضوں سے نجات کے لئے معطلی کی مدت صرف چند مہینوں کے لئے باقی رہے گی اور اس عرصے میں آنے والی تمام قرضوں کی خدمت کو نئے قرض کی صورت میں رکھا جائے گا۔ تین سالوں سے زیادہ ادائیگی کرنے کے لئے ایک مختصر مدت کے بعد دوبارہ ادائیگی شروع ہوجائے گی انہوں نے ان سے قرضوں کے بجائے پاکستان کو گرانٹ بڑھانے کو کہا۔انہوں نے کہا کہ قرض کی فراہمی سے ملک کے کل بجٹ کاtwo-fifth حصہ زیادہ کھا جائے گا کیونکہ یہ مالی سال 21 کے اخراجات میں سرفہرست ہے جو وفاقی بجٹ کے مجموعی اخراجات کا 41 فیصد ہے۔
کرونا وائرس کی دوسری لہر سے متعلق تازہ ترین معلومات