ملازمہ زہرہ تشد اور قتل کیس ہمارے ٹیسٹ کیس ہے ،شیریں مزاری

چودہ سال سے کم بچہ یا بچی گھریلو کام کیلئے ملازم نہیں رکھ سکتے،میرا مقصد سپورٹ کرنا اور مقدمہ میں انصاف ہونا چاہیے،قانون کے مطابق سزا دی جائے،وفاوزیر انسانی حقوق

جمعرات اکتوبر 13:21

ملازمہ زہرہ تشد اور قتل کیس ہمارے ٹیسٹ کیس ہے ،شیریں مزاری
راولپنڈی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 29 اکتوبر2020ء) وفاقی وزیر برائے انسانی حقوق شیریں مزاری نے کہا ہے کہ ملازمہ زہرہ تشد اور قتل کیس ہمارے ٹیسٹ کیس ہے ،چودہ سال سے کم بچہ یا بچی گھریلو کام کیلئے ملازم نہیں رکھ سکتے،میرا مقصد سپورٹ کرنا اور مقدمہ میں انصاف ہونا چاہیے،قانون کے مطابق سزا دی جائے۔

(جاری ہے)

وفاقی وزیر برائے انسانی حقوق شیریں مزاری نے جوڈیشل کمپلیکس میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ گھریلو ملازمہ زہرہ تشدد اور قتل کیس پر وکلاء سے بریفنگ لی،گھریلو ملازمہ زہرہ کا کیس لگا ہوا ہے، بچی کے ساتھ ظلم اور تشد کرنے بعد قتل کیا گیا۔

انہوںنے کہاکہ مقدمہ ہمارے لئے بہت اہم اور ٹیسٹ کیس ہے ،چائلڈ لیبر کے حوالہ سے حکومت نے قانون بنایا ہے،چودہ سال سے کم بچہ یا بچی گھریلو کام کیلئے ملازم نہیں رکھ سکتے،میرا مقصد سپورٹ کرنا اور مقدمہ میں انصاف ہونا چاہیے،قانون کے مطابق سزا دی جائے۔ انہوںنے کہاکہ مسئلہ قانون نہیں ہے ،قانون کی امپلیمینٹیشن ہے۔ شیریں مزاری نے کہاکہ زینب الرٹ ایپ پہ شکایات درج کی جاسکتی ہے۔

متعلقہ عنوان :