جہانگیر ترین کے خلاف کارروائی، پی ٹی آئی میں بڑی بغاوت کا خطرہ

جہانگیر ترین کے حمایتی گروپ کے علاوہ ایک گروپ عثمان بزدار کا مخالف بھی ہے،یہ سب مل جائیں گے تو عثمان بزدار کے لیے بہت مشکل ہو گی۔ حامد میر کا تجزیہ

Muqadas Farooq مقدس فاروق اعوان جمعرات اپریل 16:47

جہانگیر ترین کے خلاف کارروائی، پی ٹی آئی میں بڑی بغاوت کا خطرہ
لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین ۔ 08 اپریل2021ء) معروف صحافی حامد میر کا کہنا ہے کہ جہانگیر ترین کے حمایتی گروپ کے علاوہ ایک گروپ عثمان بزدار کا مخالف بھی ہے،یہ سب مل جائیں گے تو عثمان بزار کے لیے بہت مشکل ہو گی۔ ۔تفصیلات کے مطابق سینئر صحافی حامد میر کا کہنا ہے کہ میری اطلاعات کے مطابق وفاقی وزیر غلام سرور خان جہانگیر ترین کے خلاف ہونے والی کارروائی کے مخالف ہیں اور ان کی کوشش ہےکہ عمران خان اور جہانگیر ترین کے درمیان غلط فہمیوں کو دور کیا جا سکے۔

دوسری جانب وفاقی وزراء کی بڑی تعداد جہانگیر ترین کے خلاف بھی ہے کیونکہ ان کا خیال ہے کہ عمران خان جہانگیر ترین کے خلاف ہیں۔جو اراکین اسمبلی کھل کر سامنے نہیں آ رہے انہوں نے آف دی ریکارڈ جہانگیر ترین کے خلاف ہونے والی کارروائی پر افسوس کا اظہار کیا ہے کیونکہ جہانگیر ترین کہ بیٹی پر بھی مقدمہ درج کیا گیا ہے۔

(جاری ہے)

مجھے لگتا ہے آنے والے دنوں میں جہانگیر ترین کے مسئلے پر پی ٹی آئی کے اندر ایک بہت بڑا گروپ سامنے آئے گا۔

اگر عمران خان اور جہانگیر ترین کے مابین معاملات طے نہ ہوئے تو ایسی صورت میں یہ ارکان بغاوت بھی کر سکتے ہیں۔جہانگیر ترین کا کہنا ہے کہ وہ ابھی تک تحریک انصاف کا حصہ ہیں جس کا مطلب یہ ہے کہ وہ پارٹی کے اندر رہ کر ہی جنگ لڑیں گے۔ اس کا سب سے زیادہ نقصان پنجاب حکومت کو ہو گا۔جہانگیر ترین کے حمایتی گروپ کے علاوہ ایک گروپ عثمان بزدار کا مخالف بھی ہے،یہ سب مل جائیں گے تو عثمان بزار کے لیے بہت مشکل ہو گی۔اے این پی کی پی ڈی ایم سے علحیدگی پر وفاقی وزراء خوش ہیں لیکن یہ بحران اپنی جگہ پر ہے، 24 گھنٹوں میں پی ٹی آئی کے اندر بھی ایک بڑا بحران پیدا ہو گیا ہے۔بظاہر عمران خان اس بحران کو اہمیت نہیں دے رہے لیکن آگے جا کر انہیں اسے حمایت دینا پڑے گی ورنہ بہت مشکل ہو گی۔