Live Updates

”سعودیہ اور ایران کے مابین دشمنی دونوں کے لیے نقصان دہ ہے“

سابق ایرانی صدر محمد احمد نژاد نے کہا ہے کہ چند عالمی قوتیں تیل کے وسائل پر قبضے کے لیے اختلافات پیدا کر رہی ہیں

Muhammad Irfan محمد عرفان منگل جون 11:44

”سعودیہ اور ایران کے مابین دشمنی دونوں کے لیے نقصان دہ ہے“
ریاض(اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔15 جون 2021ء) سابق ایرانی صدر محمود احمدی نژاد نے کہا ہے کہ جو چیز خطے کے ممالک کو متحد کرتی ہے وہ انہیں تقسیم کرنے اور ایک دوسرے کے مخالف بنانے والے عوامل سے بڑھ کر ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ سعودی عرب اور ایران دوست، برادر اور پڑوسی ملک ہیں۔ انہیں ایک دوسرے کے ساتھ تعاون کرنا ہو گا۔العربیہ نیوز کے مطابق احمدی نژاد کا کہنا تھا کہ سعودی عرب اور ایران کے مابین دشمنی "دونوں فریقوں کے مفادات کے لیے نقصان دہ ہے۔

" دونوں ممالک "بھائی اور ہمسایہ ہیں اور ان کے مابین مشترکات اختلافی امور سے درجنوں گنا زیادہ ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ خطے کے استحکام کے لیے دونوں ملکوں کو مل کر تعاون کرنا چاہیے۔انہوں نے یورپی یونین کی طرح خطے کے ممالک کے مابین ایک "اتحاد" کے قیام کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ آخر یورپ نے اپنے عوام کے مفاد کے لیے یونین کے تجربے تک پہنچنے سے پہلے ایک طویل عرصے تک لڑائی لڑی۔

(جاری ہے)

ان کا مزید کہنا تھا کہ بین الاقوامی قوتیں توانائی اور ثقافت سے مالا مال خطے کو کنٹرول کرنے کی کوشش کر رہی ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ قوتیں اس کو کنٹرول کرنے کی کوششوں کی آڑمیں خطے میں مسائل پیدا کر رہی ہیں۔ خطے کے وسائل پر قبضہ کسی ایک ملک کے لیے نہیں۔ عراق کے مصلوب صدر صدام حسین خطے میں سب سے اہم بننا چاہتے تھے لیکن انہیں بہت سی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑا۔

خطے کے ممالک کے مابین تعاون پر بات کرتے ہوئے سابق ایرانی صدر نے کہا کہ انہوں نے اپنے دور حکومت میں 2012 میں تیل کی قیمت میں اضافے کے لیے ایک سے زیادہ بار سعودی عرب کے ساتھ تعاون کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ ان کے دور میں ریاض اور تہران کے مابین کسی قسم کے باہمی خطرات نہیں تھے۔انہوں نے کہا کہ خلیجی پانیوں پر کنٹرول کے لیے ایران اور سعودی عرب کے مابین تعاون کے دائرہ کار کو وسیع ہونا چاہیے۔ اس کے علاوہ یمن ، افغانستان اور شام جیسے حل طلب مسائل میں دونوں ممالک کے درمیان افہام وتفہیم ضروری ہے۔احمدی نژاد نے کہا کہ وہ اب ایران برسر اقتدار طبقے اور پالیسوں سے متفق نہیں ہیں۔

افغانستان کی بگڑتی صورتحال سے متعلق تازہ ترین معلومات