شیخ علی احمد الملا،گزشتہ 40سال سے چلے آرہے مسجد الحرام کے موذن

خاندان کے ایک مؤذن کے انتقال کی صورت میں ا س کے دوسرے قریبی عزیز کو ذمے داری منتقل ہوجاتی ہے،شیخ علی احمد الملاء

جمعہ مئی 12:10

مکہ مکرمہ(اُردو پوائنٹ اخبار آن لائن۔ جمعہ مئی ء)شیخ علی احمد الملا گذشتہ چار عشروں سے مسجد الحرام کے مؤذن چلے آ رہے ہیں۔ ان کا خاندان نسلاً بعد نسلٍ اس عظیم سعادت کا امین چلا آ رہا ہے اور خاندان کے ایک مؤذن کے انتقال یا سبکدوشی کی صورت میں ا س کے دوسرے قریبی عزیز کو یہ ذمے داری منتقل ہوجاتی ہے۔عرب ٹی وی کے مطابق مؤذن علی کا عرفی نام بلال الحرم ہے اور یہ عرفیت انھیں اللہ کے آخری رسول حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے پہلے مؤذن حضرت بلال حبشی رضی اللہ عنہ کے نام پر ملی تھی۔

وہ 1945ء میں مکہ مکرمہ میں مسجد الحرام کے مؤذنین کے خاندان کے ہاں پیدا ہوئے تھے۔ وہ تیس سال کی عمر میں 1975ء میں اپنے چچا زاد بھائی شیخ عبدالملک الملا کے انتقال کے بعد مسجد الحرام کے مؤذن مقرر ہوئے تھے۔

(جاری ہے)

ان سے پہلے ان کے دادا شیخ علی، والد صدیق، ان کے چچا اور ان کے دونوں بیٹے بھی مؤذن کی حیثیت سے خدمات انجام دے چکے تھے۔ انھوں نے 1979ء میں مسجد الحرام کے محاصرے کے واقعے کی مختصر تفصیل بتاتے ہوئے کہا کہ جہیمان العتیبی اور اس کے ساتھیوں نے 23 روز تک مسجد الحرام کا محاصرہ کیے رکھا تھا اور اس دوران میں پنجہ وقت نمازوں کا سلسلہ موقوف ہوگیا تھا۔

العتیبی نے کعبہ میں خود کو امام مہدی کہلوانے والے ایک شخص کے ہاتھ پر بیعت کی تھی۔انھوں نے بتایا کہ جب اس محاصرے کا خاتمہ ہوا تو انھوں نے سب سے پہلے نماز مغرب کی شاہ خالد بن عبدالعزیز مرحوم کی مسجد الحرام میں موجودگی میں اذان دی تھی اور 23 روز کے بعد مسجد الحرام میں پہلی مرتبہ نماز مغرب باجماعت ادا کی گئی تھی۔

متعلقہ عنوان :

Your Thoughts and Comments