قصور شہر مسائل کا گڑھ ۔۔۔۔ یہ ضلع اب تک تعمیر و ترقی سے محروم ہے

ڈسٹرکٹ قصور جو اپنی اہمیت کا خود حامل ہے اور پاکستان کا ایک تاریخی ضلع ہے مگر آج بھی یہ ضلع تعمیر و ترقی سے محروم ہے یہاں کی عوام کو ان کے حقو ق نہیں مل سکے ہیں۔ اس بات کو نہیں جھٹلایا جاسکتا کہ پنجاب حکومت کی جانب سے قصور کیلئے اربوں کے فنڈز دئیے جاچکے ہیں

جمعرات مارچ

Kasur Sheher Masail Ka Ghar
حاجی شریف مہر:
ڈسٹرکٹ قصور جو اپنی اہمیت کا خود حامل ہے اور پاکستان کا ایک تاریخی ضلع ہے مگر آج بھی یہ ضلع تعمیر و ترقی سے محروم ہے یہاں کی عوام کو ان کے حقو ق نہیں مل سکے ہیں۔ اس بات کو نہیں جھٹلایا جاسکتا کہ پنجاب حکومت کی جانب سے قصور کیلئے اربوں کے فنڈز دئیے جاچکے ہیں وزیراعلیٰ پنجاب میاں محمد شہباز شریف جو پنجاب کو مثالی صوبہ بنانے کیلئے انتھک محنت کررہے ہیں اور ہر شہر کو پیرس بنانے کا خواب دیکھتے ہیں۔

جس کیلئے وہ ہر وقت کا م کرتے ہو ئے نظر آتے ہیں اور ہر لمحہ انتھک محنت کررہے ہیں اور بھاری فنڈز دے رہے ہیں اسی طرح انہوں نے قصور سٹی کیلئے پنجاب ڈویلپمنٹ پروگرام کے تحت بھاری بجٹ دیا ہے مگر قصور سٹی کا مشاہدہ کرپشن کی ایک کھلی داستان واضح کرتا ہے۔

(جاری ہے)

قصور میں کہیں بھی ڈویلپمنٹ کا کام نہ ہونے کے برابر ہے قصور سٹی میں اگر کوئی کام ہوا بھی ہے تو وہ بھی کرپشن کی نظر ہے۔

قصور سٹی سیوریج کا نظام بغیر کسی حکمت عملی کے چل رہا ہے اور تمام نظام درہم برہم ہے سڑکیں اور گلی محلے مکمل طورپر ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہیں قصور سٹی کا 70فیصد حصہ آج بھی تعمیرو ترقی سے محروم ہے جس کی وجہ سے لوگوں کو بے شمار مسائل کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے اورقصور کیلئے جاری کردہ بھاری بجٹ کے فنڈز کرپشن کی دلدل کی نظر ہو گئے ہیں ۔کرپشن اس قدر اپنے پاوٴں جمائے ہو ئے ہیں کہ نئے سرے سے تعمیر ہونے والی سڑکوں سے گزرنا بھی کسی چیلنج سے کم نہیں ہے اور سیوریج کا نظام اس قدر درہم برہم ہے کہ بارش کی دو بوندیں گرنے سے شہر جل تھل ہو جاتا ہے اور ہر طرف پانی پانی نظر آتا ہے جس میں ہر چیز تیرتی ہو ئی نظر آتی ہے۔

بارش کی دوبوندیں گرنے سے پانی لوگوں کے گھر ،ہسپتالوں ،سکولوں دفتروں اور سرکاری عمارتوں میں داخل ہو جا تا ہے اور نظام زندگی ٹھہر کررہ جاتا ہے مقامی ایم این ایز اور ایم پی ایز کے پاس آنے والی گرانٹ ان کے پاس ہی رہ جاتی ہے اور عوام کی سہولیات پر لگانے کی بجائے ساری گرانٹ اپنے ہی پیٹ میں بھر میں لیتے ہیں۔ اور 100میں سے 30روپے عوام پر خرچ کر تے ہیں جس کا انداز قصور سٹی کا وزٹ کرکے بخوبی لگایا جا سکتا ہے جو سیدھا ٹیکہ عوام کو لگ رہا ہے ۔

موجودہ صورت حال یہ ہے کہ حالیہ تعمیر و ترقی کا ہونے والا کام جس سے حقدار علاقے جو سٹی کے ہی علاقے ہیں مکمل طورپر محروم رکھا گیا ہے۔ یہ علاقے مکمل تعمیر سے محروم ہیں حالیہ تعمیر و ترقی کا کام جن علاقوں میں ہوا ہے اس میں تمام میٹریل ناقص استعمال کیا گیا ہے اور تمام کام سفارشی کیے جارہے ہیں جبکہ ایسے علاقے جن کی نمائندگی کرنے والا کوئی بھی نہیں ہے ۔

غریب لوگ رہتے ہیں ان علاقوں میں آج تک ایک پیسہ بھی ان کی تعمیروں ترقی کیلئے نہیں لگایا گیا ہے جبکہ دوسری طرف ایسے علاقے جن میں پہلے ہی تعمیراتی کام ہو چکا ہے اس کو دوبارہ اکھاڑ کر دوبارہ تعمیر کیا جاتا ہے۔ جس سے پسماندہ علاقوں کے عوام کے اندر اثاثے محرومی پائی جارہی ہے اور ایم این ایز، ایم پی ایز بھی اپنی نااہلی کو برقرار رکھتے ہوئے کبھی ان علاقوں میں پاوٴں رکھنا گوارہ نہیں کیا ہے۔

جبکہ ان علاقوں کی عوام نے متعدد بار احتجاج کا راستہ بھی اپنایا ہے مگر اس کے باوجود ان کی دادرسی نہیں ہو پائی ہے اگر صفائی کی بات کی جائے تو اس کا بھی کوئی پر سان حال نہیں اور صفائی کرنے کی ٹھیکیدار ٹی ایم اے قصو ر بھی اپنی نااہلی کی وجہ سے صفائی کا کوئی انتظامات موجود نہیں ۔ ٹی ایم اے قصور اگر 50فیصد بھی اپنی کارکردگی کا مظاہرہ کریں تو قصور میں صفائی کے انتظامات نظر آئیں گے مگر ٹی ایم اے قصور کا بھی اللہ حافظ ہے قصور میں جگہ جگہ گندگی کے ڈھیر سرعام دیکھے جا سکتے ہیں یہاں تک کہ قصور شہر کے اندر بھی جگہ جگہ گندگی دیکھی جا سکتی ہے جس کی وجہ اچھی حکمت عملی کا نہ ہونا ہے۔

جہاں سیوریج اور سڑکیں ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہیں وہی اگر صفائی کے حوالے سے وزٹ کیا جا ئے تو ایسا محسوس ہو گا کہ جیسے گندے پانی کے جوہڑوں تالابوں اور گندگی کی دنیا میں آگئے ہیں۔قصور شہر اور گرد و نواح میں جگہ جگہ گندے پانی کے جوہڑ، تالاب اور گندگی کے ڈھیر پڑے ہوئے ہیں جس پر کبھی انتظامیہ نے دھیان بھی نہیں دیا اور اپنی کرسیوں پر بیٹھ کر عوام کی خدمت کیے بغیر تنخواہیں مزے سے لے رہے ہیں اور اپنے دفتروں سے باہر نکل کر کبھی وزٹ ہی نہیں کیا۔

اس گندگی کے باعث لوگوں میں متعدد خطرناک بیماریاں جنم لے چکی ہیں یہی گندگی مچھروں کی پیداوار کا سبب بن رہی ہے اور ڈینگی جنم لے رہا ہے ۔اگر اسی طرح صورت حال رہی اور انتظامیہ کو غفلت کی نیند سے نہ جگایا گیا تو قصور کو ڈینگی کے خطرات لاحق ہو سکتے ہیں ٹی ایم اے قصور کی نااہلی کا اندازہ خاکروب کا بے قابو ہونے پر لگایا جا سکتا۔ خاکروب ہی ٹی ایم اے کے کنٹرول سے باہر ہیں تو ٹی ایم اے قصور سے اور کیا امیدیں لگائی جاسکتی ہیں خاکروب اپنی مرضی سے گلی محلوں کی صفائی کیلئے جاتے ہیں اگر شہری ان سے صفائی نہ کرنے کا اعتراض کریں تو خاکروب الٹا شہریوں سے بدمعاشی پر اتر آتے ہیں اور کہتے ہیں کہ جو کرنا ہے کرلو آپ لوگ ہمارا کچھ نہیں کر سکتے ۔

کیونکہ یہ خاکروب اپنے اوپر موجود دروغوں کو ماہانہ منتھلی دیتے ہیں اسی طرح ٹی ایم اے قصور کے اندر نیچے سے لیکر اوپر تک کرپشن کا بازار گرم ہے اور یہ ٹی ایم اے قصور کی بجائے کرپشن گھر بن چکا ہے ۔ جو عوا م کے خون پسینے کے پیسے سے چل رہا ہے اور بھاری مالیت کے فنڈ صفائی کے نام پر حکومت سے وصول کر لیے جاتے ہیں شہریوں نے متعدد بار قصور کی اس صورت حال پر انتظامیہ کے خلاف بہت سے احتجاج ریکارڈ کروائے ہیں مگر ان کی کوئی نہیں سنتا۔

عوام نے بلدیاتی نظام کے ذریعے بیٹھنے والے چیئرمین اور وائس چیئرمین پر امیدیں لگائی ہوئی ہیں قصور کی سیاسی و سماجی، مذہبی، وکلا اور دیگر تنظیموں کے ساتھ ساتھ شہریوں نے وزیراعلیٰ پنجاب میاں محمد شہباز شریف سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ قصور کی عوام کی دادرسی کرتے ہوئے ایسی ٹیمیں تشکیل دے جو ذمہ داران کا تعین کرکے ان کو ان کے کیے کی سزا دی جائے۔

تاکہ قصور کا بگڑا ہوا نقشہ بہتر نہ سہی کم ازکم کرپشن سے بچ کر اپنی اصلی حالت میں ہی آجائے۔ جب صفائی کے سلسلہ میں میونسپل کمیٹی قصور کے چیئرمین ایاز احمد خان سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے کہا کہ ہمیں چند دن ہو ئے ہیں عہدہ سنبھالیں ہو ئے ہم صفائی کیلئے ایک جامع پلان تشکیل دے رہے ہیں جس سے شہر کی صفائی کو یقینی بنانے کیلئے ہر ممکنہ اقدامات کریں گے اورصفائی کی مانیٹرنگ کیلئے چیف سینٹری انسپکٹر کو بھی سخت ہدایات جاری کردی گئی ہیں ۔

اس تمام صورت حال پرجب ڈپٹی کمشنر عمارہ خان سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے کہا کہ بلدیاتی نظام حالیہ ہی اپنے وجود میں آیا ہے اور بلدیاتی چیئرمین اور وائس چیئرمین کے ساتھ اسی حوالے سے میٹنگز جاری ہے جس کے ذریعے ایک خاص حکمت عملی کے تحت کام کیے جائیں گے جس کی نگرانی میں خود کروں گی اور غفلت برتنے والوں کے خلاف محکمانہ کارروائی کی جائے۔

قصور کے مزید مضامین :

Your Thoughts and Comments

Kasur Sheher Masail Ka Ghar is a khaas article, and listed in the articles section of the site. It was published on 30 March 2017 and is famous in khaas category. Stay up to date with latest issues and happenings around the world with UrduPoint articles.