سال 2017 میں 3445 بچوں کو جنسی تشدد کا نشانہ بنانے کیخلاف پنجاب اسمبلی میں تحریک التوائے کار جمع

جمعرات اپریل 14:37

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 19 اپریل2018ء) تحریک انصاف کی رکن پنجاب اسمبلی ڈاکٹر نوشین حامد نے صرف سال 2017 میں 3445 بچوں کو جنسی تشدد کا نشانہ بنانے کے خلاف پنجاب اسمبلی میں تحریک التوائے کار جمع کرادی جس میں کہا گیا ہے کہ بچوں پرجنسی تشدد کے خلاف کام کرنے والی غیر سرکاری تنظیم نے اپنی رپورٹ جاری کی ہے۔جس کے مطابق 2017 میں 3445 بچوں کو جنسی تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔

(جاری ہے)

اس دوران 2077 بچیاں جبکہ 1368 بچے جنسی تشدد کا شکار ہوئے۔ان واقعات سے ظاہر ہوتا ہے کہ روزانہ 9 سے زائد بچے جنسی تشدد کا نشانہ بنے۔رپورٹ کے مطابق کم عمری کی شادی کے 143 واقعات رجسٹرڈ ہوئے۔جبکہ 24 بچیوں کو پنچایت کے حکم پر ونی کیا گیا۔بچوں اور بچیوں پر جنسی تشدد کے واقعات کی سب سے زیادہ تعداد صوبہ پنجاب سے رپورٹ ہوئی۔لہذا حکومت سے استدعا ہے کہ جنسی تشدد کی روک تھا م کیلئے عملی طور پر اقدامات کیے جائیں اور قانون سازی کی جائے۔