کوئٹہ ، بجٹ میں لیویز کی700 سے زائد اسامیوںد بیورو کریسی کی نا اہلی کے

باعث الیکشن کمیشن کی پابندی کی بھینٹ چڑ ھ گئیں 10 ماہ قبل مذکورہ اسامیاں اخبارات میں مشتہر ہونے کے باوجود بھرتیوں کا عمل نہ ہونے سے نوجوان روزگار سے محروم ہو گئے

جمعرات اپریل 21:14

کوئٹہ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 19 اپریل2018ء) بلوچستان کے بجٹ میں لیویز کی700 سے زائد اسامیوں کو پر کرنے کے لئے 10 ماہ گزرنے کے باوجود بیورو کریسی کی نا اہلی اور لا پر واہی اور ہٹ دھرمی کی و جہ سے مذکورہ اسامیاں اخبارات میں مشتہر ہونے کے باوجود ان پر بھرتیوں کا عمل نہ ہونے کی وجہ سے الیکشن کمیشن آف پاکستان کی جانب سے سرکاری محکموں میں بھرتیوں پر پابندی کی بھینٹ چڑ ھ گئی نوجوان روزگار سے محروم ہو گئے ذرائع کے مطابق رواں مالی سال کے بجٹ میں بلوچستان لیویز کی700 سے زائد آسامیوں کی منظوری دی گئی 10 ماہ کا عرصہ گزرنے اور مذکورہ اسامیوں کو اخبارات کو مشتہر کرنے کے باوجود ایڈمن کی منظوری نہ ہونے کی وجہ سے ٹیسٹ وانٹرویو نہ ہو سکے جس میں بیورو کریسی کی نا اہلی ، لا پر واہی اور ہٹ دھرمی کی وجہ سے 700 سے زائد نوجوان روزگار سے محروم ہے کیونکہ الیکشن کمیشن آف پاکستان کی جانب سے سرکاری محکموں میں بھرتیوں کے عمل پر پابندی کے فیصلے کی وجہ سے یہ ان اسامیوں پر بھرتیوں کا عمل متاثر ہونے کا خدشہ ہے ذرائع کے بتایا کہ رواں مالی سال کے بجٹ میں700 سے زائد اسامیوں کی منظوری دی گئی تا حال ان پر بھرتی کا عمل شروع نہیں ہوا جس کی وجہ سے آج بھی صوبے کے سینکڑوں نوجوان جو بلوچستان کے مختلف علاقوں ڈیرہ بگٹی، تربت ، کوہلو سمیت دیگر علاقے علاقوں جہاں پر لیویز اہلکاروں کی اسامیاں تھی بھرتی نہ ہونے سے مقامی نوجوانوں میں مایوسی برھ رہی ہے اور بے روزگاری میں اضافہ ہو رہا ہے۔