ْ لڑکیوں کے جینزپہننے اور موبائل پر پابندی سے حالات بہتر ہوئے ہیں، بھارتی پردھان کا دعویٰ

برائی پہناوے میں نہپیں سوچ میں ہے، پہناوے سے کردار جانچنا مناسب نہیں، خواتین کا موقف

جمعہ اپریل 21:47

سوئی پت(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 20 اپریل2018ء) بھاتی ریاست ہر یانہ میں سر پنچوں کا کہنا ہے کہ لڑکیوں کے جینزپہننے اور موبائل پر پابندی سے حالات بہتر ہوئے ہیں،ہمارے پہناوے میں برائی نہیں ،برائی مردوں کی سوچ میں ہے، پہناوے سے کردار جانچنا مناسب نہیں۔ بھارتی میڈیا کے مطابق بھارتی ریاست ہریانہ کے سونی پت ضلع کے عیسائی پور کھیڑی گا?ں کی پنچایت نے لڑکیوں کے جینز پہننے اور موبائل استعمال پر پابندی اسوقت لگادی جب لڑکیوں کے اپنے دوستوں کے ہمراہ فرارہونے کے متعدد واقعات پیش آئے۔

(جاری ہے)

واضح ہو کہ گا?ں میں گزشتہ ایک سال سے لڑکیوں کے جینز پہننے اور موبائل استعمال کرنے پر پابندی ہے۔ گائوں کے پردھان نے بتایا کہ جب سے یہ اقدامات کئے گئے گا?ں کی صورتحال بہتر ہوگئی اور لڑکیوں نے جینز پہننا اور موبائل استعمال کرنا ترک کردیا ہے۔ میں یہ نہیں کہتا کہ لڑکیاں موبائل کے استعمال سے بگڑگئیں بلکہ موبائل انہیں راس نہیں آتا۔گا?ں کی ایک لڑکی نے اس پابندی کی مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ یہ پابندی عجیب ہے ، پریشانی مردوں کی سوچ میں ہے ، ہم کیا پہنتے ہیں اٴْس میں نہیں۔کپڑوں سے ہمارے کردار کے بارے میں اچھے برے کی تمیز کرنا مناسب نہیں۔