پشاور، خیبرپختونخوااسمبلی نے فاٹا کوصوبے میں ضم کرنے سے متعلق بل کو دوتہائی اکثریت سے منظورکرلیا

بل کی حمایت میں92جبکہ مخالفت میں جے یوآئی کی7ووٹ اراکین نے ووٹ دئیے تحریک انصاف کے علاوہ مسلم لیگ ن، جماعت اسلامی ،پیپلزپارٹی،عوامی نیشنل پارٹی،قومی وطن پارٹی نے بل کی حمایت کی خیبرپختونخوااسمبلی کااجلاس سپیکراسدقیصرکے زیرصدارت شروع ہوا تو اجلاس کے آغاز پر پاٹایعنی ملاکنڈڈویژن سے تعلق رکھنے والے اراکین اسمبلی نے بل کے متعلق تحفظات کااظہار کیا

اتوار مئی 23:00

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 27 مئی2018ء) خیبرپختونخوااسمبلی نے فاٹا کوصوبے میں ضم کرنے سے متعلق بل کو دوتہائی اکثریت سے منظورکرلیابل کی حمایت میں92جبکہ مخالفت میں جے یوآئی کی7ووٹ اراکین نے ووٹ دئیے تحریک انصاف کے علاوہ مسلم لیگ ن،، جماعت اسلامی ،پیپلزپارٹی،عوامی نیشنل پارٹی،،قومی وطن پارٹی نے بل کی حمایت کی ۔خیبرپختونخوااسمبلی کااجلاس سپیکراسدقیصرکے زیرصدارت شروع ہوا تو اجلاس کے آغاز پر پاٹایعنی ملاکنڈڈویژن سے تعلق رکھنے والے اراکین اسمبلی نے بل کے متعلق تحفظات کااظہارکرتے ہوئے کہاکہ پاٹاکی موجودہ حیثیت کونہ چھیڑاجائے ٹیکس استثنیٰ کو دس سال دئیے جائیں جوقابل توسیع ہوں اسی طرح نظام عدل ریگولیشن کو مستقل آرڈیننس یا ایکٹ کی شکل میں منظورکرایاجائے اورفاٹاکی طرح ملاکنڈڈویژن کے سات اضلاع کیلئے بھی سو ارب روپے کاخصوصی پیکج دیاجائے فاٹا کو خیبرپختونخوامیں ضم کرنے کے حوالے سے قومی اسمبلی وسینٹ پہلے ہی دوتہائی اکثریت سے منظوری دے چکی ہے خیبرپختونخوااسمبلی میں پاکستان تحریک انصاف کے منحرف اراکین اسمبلی نے بھی بل کی حمایت میں ووٹ دئیے ۔

(جاری ہے)

بل کی صوبائی وزیر قانون امتیازشاہدقریشی نے آئین کے آرٹیکل239کی ذیلی شق4کے تحت پیش کیا جس کے بعد اراکین اسمبلی نے دستخط کردیئے جے یوآئی اراکین نے مخالفت اور دیگرسیاسی جماعتوں نے حمایت میں حق رائے دہی استعمال کیا۔قبل ازیں جماعت اسلامی کے پارلیمانی لیڈرعنایت اللہ نے کہاکہ تمام جماعتیں روزاول سے ایف سی ارکے خلاف ہیں فاٹاکے عوام نے جوسختیاں جھلیں آج ان کے مداوے کاوقت آگیاہے پاکستان پیپلزپارٹی کے محمدعلی شاہ باچہ نے کہاکہ جے یوآئی علاوہ تمام سیاسی جماعتوں کو فاٹابل کی منظوری مبارک ہو جے یوآئی نے جتنازورانضمام کی مخالفت میں لگائے اگر یہ شریعت کے نفاذ میں لگاتی تو پورے ملک میں کب کا شریعت نافذ ہوچکاہوتاتحریک انصاف کے ڈاکٹرحیدر نے کہاکہ ملاکنڈڈویژن کے عوام فاٹاکے عوام کو اپنے ساتھ ملنے پر خوش آمدیدکہتے ہیں اے این پی کے سرداربابک نے بل کوخوش آمدیدکہتے ہوئے کہاکہ فاٹاکے عوام خیبرپختونخواحصہ بن کر صوبے کی ترقی میں اپناحصہ ڈالینگے صوبائی وزیرشاہ فرمان نے کہاکہ ان کی سیاسی جماعت روز اول سے فاٹااصلاحات کے حامی ہیں ہم تمام پختونوں کوایک پلیٹ فارم پر ملانا چاہتے ہیں اور بہت جلد افغانستان کے پشتون بھی ہمارے ساتھ مل جائینگے قومی وطن پارٹی کے سکندرشیرپائو نے کہاکہ ماضی میں فاٹااصلاھات کے کئی مواقعوں کو ضائع کیاگیاآج تاریخ ساز دن ہے ،،ن لیگ سرداراورنگزیب نلہوٹھانے کہاکہ طویل جدوجہد کے بعد فاٹاکے عوام کواپناحق ملاہے فاٹا کے عوام مبارکبادکے مستحق ہیں ان مسلم لیگ ن کے دور میں اتنی بڑی کامیابی پورے پاکستان کی کامیابی ہے اپوزیشن لیڈر مولانالطف الرحمان نے مخالفت کرتے ہوئے کہاکہ کشمیری عوام سے رائے لی جاتی ہے لیکن فاٹاکے عوام سے رائے طلب نہیں کی جاتی فاٹاکے عوام کو اپنے مستقبل کا فیصلہ کرناچاہئے تھا اس بل کی ہر فورم پر مخالفت کرینگے سیاسی وجمہوری فیصلے کیلئے باہرسے ہمیں ہدایات دی جاتی ہیں امریکہ کے دبائو پر انضمام ہورہاہے اس کے منفی نتائج آئینگے ۔