یمن کا تنازع ختم کرانے کیلئے مثبت کردار ادا کرنے کو تیار ہیں ،ْ وزیر اعظم عمران خان کی پیشکش

مشرق وسطیٰ میں مفاہمت کار کا کردار ادا کرنا چاہتے ہیں ،ْحوثیوں کے حملوں کے مقابلے میں سعودی عرب کا ساتھ دیں گے ،ْحکومت میں پسماندہ طبقے کو اوپر لایا جائے گا، انفرا اسٹرکچر نہیں عوام پر رقم خرچ ہوگی ،ْ ایران پڑوسی ہے یقینا تمام پڑوسیوں سے اچھے تعلقات ہونے چاہئیں ،ْگورننس ٹھیک کرلی تو فیملی کے ساتھ زیادہ وقت گزارنا آسان ہو جائیگا ،ْ انٹرویو

جمعرات ستمبر 13:20

یمن کا تنازع ختم کرانے کیلئے مثبت کردار ادا کرنے کو تیار ہیں ،ْ وزیر ..
جدہ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 20 ستمبر2018ء) وزیر اعظم عمران خان نے پیشکش کی ہے کہ یمن کا تنازع ختم کرانے کیلئے مثبت کردار ادا کرنے کو تیار ہیں اور مشرق وسطیٰ میں مفاہمت کار کا کردار ادا کرنا چاہتے ہیں ،ْحوثیوں کے حملوں کے مقابلے میں سعودی عرب کا ساتھ دیں گے ،ْحکومت میں پسماندہ طبقے کو اوپر لایا جائے گا، انفرا اسٹرکچر نہیں عوام پر رقم خرچ ہوگی ،ْ ایران پڑوسی ہے یقینا تمام پڑوسیوں سے اچھے تعلقات ہونے چاہئیں ،ْگورننس ٹھیک کرلی تو فیملی کے ساتھ زیادہ وقت گزارنا آسان ہو جائے گاسعودی میڈیا کو دیئے گئے انٹرویومیں عمران خان نے کہا کہ ہمیشہ سعودی عرب کے ساتھ کھڑے ہے اور حوثیوں کے حملوں کے مقابلے میں سعودی عرب کا ساتھ دیں گے کیونکہ اس نے ہر بٴْرے وقت میں پاکستان کا ساتھ دیا۔

(جاری ہے)

عمران خان کا کہنا تھا کہ مختلف بحرانوں کی وجہ سے 3 ماہ تک ملک سے باہر نہیں جانا تھاتاکہ پہلے اپنا گھر ٹھیک کریں لیکن سعودی عرب کا دورہ اس لیے کیا کیوں کہ شاہ سلمان نے دعوت دی تھی، اور اس لیے بھی کہ بحیثیت مسلمان مکہ اور مدینہ جانا چاہیے۔انہوںنے کہا کہ کرپشن کے خلاف جو سعودی عرب میں کیا گیا وہ بھی ایسا ہی کرنا چاہتے ہیں، عمران خان کے مطابق حکومت میں پسماندہ طبقے کو اوپر لایا جائے گا، انفرا اسٹرکچر نہیں عوام پر رقم خرچ ہوگی۔

ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ ایران پڑوسی ہے یقینا تمام پڑوسیوں سے اچھے تعلقات ہونے چاہئیں، افغانستان اور بھارت سے بھی اچھے تعلقات کی خواہش کا اظہار کیا اور کہا کہ دونون ممالک کو دوستانہ تعلقات کی پیشکش کی ہے۔نجی زندگی سے متعلق سوال پر عمران خان نے کہا کہ گورننس ٹھیک کرلی تو فیملی کے ساتھ زیادہ وقت گزارنا آسان ہو جائے گا۔وزیر اعظم نے کہا کہ عالم اسلام میں جاری تنازعات نے مسلم امہ کی قوت کوشدید نقصان پہنچایا ،ْپاکستان تمام فریقوں کے ساتھ مل کرعالم اسلام میں جاری لڑائیوں کو ختم کرانے کیلئے اپنا کردار ادار کریگا۔

انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ مسلمان ممالک میں جاری لڑائیاں خطرناک ہیں۔ صومالیہ، لیبیا، شام اور افغانستان میں جاری محاذ آرائی ہمارے سامنے ہے ،ْاس نے ہمیں بہت کم زور کیا ،ْ ان لڑائیوں کو ختم کرانے کے لیے پاکستان اپنا کردار ادا کرتا رہے گا۔