برطانوی ارکان پارلیمنٹ کا بھارت کے ساتھ تجارتی معاہدوںکو انسانی حقوق پر پیش رفت سے مشروط کرنے کا مطالبہ

بدھ جنوری 19:33

لندن (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 13 جنوری2021ء) بھارت میں مسلمانوں ، عیسائیوں اور دیگر اقلیتی گروپوںپر ہونے والے ظلم و ستم کے بارے میں برطانوی دار العوام میں ہونے والی بحث کے دوران متعدد ارکان پارلیمنٹ نے بھارت کے ساتھ آئندہ کسی بھی تجارتی معاہدے کو انسانی حقوق کا پاس ولحاظ رکھنے سے مشروط کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق اس مباحثے میں کنزرویٹوز پارٹی سمیت مختلف جماعتوں کے ارکان پارلیمنٹ نے حصہ لیا۔

(جاری ہے)

ڈیموکریٹک یونینسٹ پارٹی کے رکن پارلیمنٹ جم شینن نے برطانیہ کی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اس بات کو یقینی بنائے کہ آئندہ کسی بھی تجارتی اور سرمایہ کاری کے معاہدے میں انسانی حقوق کی دفعات کو شامل کیا جائے۔ کنزرویٹو رکن پارلیمنٹ سر ایڈورڈ لی نے کہاکہ حقیقی دوستی کا مطلب یہ نہیں کہ بھارت کی غلطیوں پر آنکھیں بند کی جائیں،برطانیہ کو بھارت میںہونے والے ظلم و ستم پر احتجاج کرنا چاہئے۔حریت رہنما شبیر احمد ڈار اور انسانی حقوق کے کارکن محمد احسن اونتو نے سرینگر میں جاری ایک مشترکہ بیان میں برطانوی ارکان پارلیمنٹ کی طرف سے آئندہ کسی بھی تجارتی اور سرمایہ کاری کے معاہدے میں بھارت کے انسانی حقوق کے ریکارڈ پر پارلیمانی بحث کا خیرمقدم کیا ہے۔