فرانسیسی صدر کو سر عام تھپڑ پڑنے کے بعد اب انڈہ پڑ گیا، ویڈیو وائرل

صدر کے سیکورٹی اہلکاروں نے انڈہ پھینکنے والے شخص کو فوری حراست میں لے لیا

Danish Ahmad Ansari دانش احمد انصاری پیر 27 ستمبر 2021 19:59

فرانسیسی صدر کو سر عام تھپڑ پڑنے کے بعد اب انڈہ پڑ گیا، ویڈیو وائرل
پیرس (اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 27 ستمبر 2021ء) فرانسیسی صدر کو سر عام تھپڑ پڑنے کے بعد اب انڈہ پڑ گیا، ویڈیو وائرل- تفصیلات کے مطابق فرانس کے صدر ایمانوئیل میکرون کو تجارتی مرکز کا جائزہ لینے کے دوران شہری نے انڈہ مار دیا۔ غیر ملکی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق پولیس نے انڈہ مارنے والے شہری کو گرفتار کرلیا ہے۔ رپورٹ کے مطابق یہ واقعہ پیر کے روز جنوبی فرانس کے شہر لیون میں پیش آیا۔

فرانسیسی صدر کو انڈہ پڑنے کی ویڈیو ایک شہری نے ٹوئٹر پر شیئر کی ہے انہوں نے ٹوئٹ میں لکھا ہے کہ لیون کا سفر کرتے ہوئے ایمانوئل میکرون کو انڈہ پڑ گیا۔ صدر کے سیکورٹی اہلکاروں نے انڈہ پھینکنے والے شخص کو فوری حراست میں لے لیا ہے۔ رپورٹ کے مطابق فرانسیسی صدرنے سیکورٹی اہلکاروں کو ہدایت کی کہ اگر اس کے پاس مجھے بتانے کے لئے کچھ ہے تو اسے لے آؤ؟ اگر نہیں تو میں بعد میں اس سے ملنے جاؤں گا. جاؤ اسے لے آؤ- یاد رہے کہ چند ماہ قبل فرانسیسی صدر کو شہری نے تھپڑ رسید کیا تھا۔

(جاری ہے)

فرانسیسی صدر ایمانویل میکخواں کو تھپڑ مارنے والے شخص کو چار ماہ قید کی سزا سنائی گئی تھی-
 ڈیمیئن تاریل نامی اس شخص نے عدالت میں اپنا جرم قبول کرتے ہوئے کہا تھا کہ اس سے یہ حرکت اچانک جذبات میں سرزد ہوئی لیکن استغاثہ نے کہا کہ یہ ’دانستہ طور پر کیا گیا تشدد تھا‘۔

فرانسیسی صدر ایمانویل میکخواں کو جنوب مشرقی فرانس کے سرکاری دورے کے دوران تھپڑ مارا گیا تھا۔ عدالت کو بتایا گیا کہ مجرم دائیں بازو یا انتہائی دائیں بازو کی تنظیموں کا رکن ہے۔ جس وقت صدر میکخواں کو تھپڑ مارا گیا، اسی دوران اس شخص نے ’ڈاؤن ود میکرون ازم‘ (یعنی میکخواں کا دور ختم) کا نعرہ بھی لگایا تھا۔ ملک کے مختلف سیاستدانوں کی جانب سے واقعے کی مذمت کی گئی تھی۔

فرانسیسی وزیراعظم یان كاستيكس نے واقعے کے بعد قومی اسمبلی میں بتایا تھا کہ جہوریت کا مطلب بحث اور جائز اختلاف ہے لیکن ’اس کا ہرگز یہ مطلب نہیں کہ تشدد، لفظی جارحیت یا جسمانی حملے کیے جائیں۔‘ اس تھپڑ کے بعد انتہائی بائیں بازوں کے سیاسی رہنما یان لوک نے ٹویٹ میں ’صدر کے ساتھ یکجہتی کا اظہار‘ کیا۔ صدر میکخواں اس وقت فرانس کے ایک سرکاری دورے پر تھے جہاں انھوں نے اس علاقے میں ایک ہوٹل سکول کا جائزہ لیا تھا۔ واقعے کے بعد حکام کا کہنا تھا کہ یہ دورہ جاری رہے گا اور اس میں 25 سے 30 سال عمر کے لوگوں کے لیے ایک پیشہ ورانہ انسٹی ٹیوٹ کا جائزہ بھی لیا- جائے گا۔